’اقوامِ متحدہ پاکستان کیلئے مزید 60 کروڑ ڈالر کی امدادی اپیل کرے گا‘

30 ستمبر 2022
<p>سیلاب سے ہوئے نقصان اور امدادی ضروریات پر رپورٹ 15 اکتوبر تک مکمل کرلی جائے گی—فائل فوٹو: رائٹرز</p>

سیلاب سے ہوئے نقصان اور امدادی ضروریات پر رپورٹ 15 اکتوبر تک مکمل کرلی جائے گی—فائل فوٹو: رائٹرز

اقوام متحدہ ملک بھر میں لاکھوں سیلاب زدگان کو فوری امداد فراہم کرنے کے لیے 4 اکتوبر کو پاکستان کے لیے اضافی 60 کروڑ ڈالر امداد کی ایک نئی اپیل کرے گا۔

ڈان اخبار کی رپورٹ کے مطابق سیلاب کی امدادی سرگرمیوں کے لیے بین الاقوامی امداد کی رابطہ کاری کے لیے اسٹیئرنگ کمیٹی کے فالو اپ اجلاس میں اقتصادی امور ڈویژن (ای اے ڈی) کے سیکریٹری حمیر کریم نے دو طرفہ عطیہ دہندگان اور بین الاقوامی اور ملکی امداد اور امدادی ایجنسیوں کو بتایا کہ اقوام متحدہ 4 اکتوبر کو 60 کروڑ ڈالر اضافی امدادی امداد کے لیے نظرثانی شدہ اپیل کا آغاز کرے گی۔

انہوں نے کہا کہ اقوام متحدہ نے 30 اگست کو سیلاب کی امداد کے لیے 16 کروڑ ڈالر کی امداد کے لیے ہنگامی اپیل کی تھی لیکن اس گرانٹ کو غیر معمولی تباہی کے پیش نظر کافی نہیں سمجھا گیا۔

یہ بھی پڑھیں: اقوام متحدہ کی پاکستان میں سیلاب متاثرین کیلئے16کروڑ ڈالر کی ہنگامی امداد کی اپیل

حکومت نے اندازہ لگایا ہے کہ سیلاب سے ہوئی تباہی کے سبب رواں مالی سال کے دوران اس کی اقتصادی ترقی کی شرح بجٹ کے 5 فیصد ہدف کے مقابلے میں 2 فیصد تک گر جائے گی۔

اجلاس میں اقوام متحدہ کے ترقیاتی پروگرام، اقوام متحدہ کے دفتر برائے رابطہ برائے انسانی امور، ترکی اور چین کے سفارتخانوں، برطانوی ہائی کمیشن، پاکستان کی خارجہ، صحت اور خوراک کی وزارتوں، بینظیر انکم سپورٹ پروگرام، ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی اور ای اے ڈی کے نمائندوں نے شرکت کی۔

وزیراعظم شہباز شریف نے گزشتہ ماہ بین الاقوامی ترقیاتی شراکت داروں کے درمیان بہتر ہم آہنگی اور سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں بین الاقوامی امداد کی مؤثر اور بہتر فراہمی کے لیے اسٹیئرنگ کمیٹی تشکیل دی تھی۔

اجلاس کو بتایا گیا کہ عالمی بینک، ایشیائی ترقیاتی بینک، امریکا، برطانیہ، جاپان، ترکی، چین، یورپی یونین، سویڈن، ڈنمارک، بیلجیم، جرمنی، پیٹرولیم ایکسپورٹنگ کی تنظیم ، متحدہ عرب امارات، اٹلی، نیوزی لینڈ، آسٹریلیا، کینیڈا، قطر، ازبکستان، سنگاپور، سعودی عرب، عمان، ناروے، اردن، آسٹریا، نیپال، فرانس، ترکمانستان، روس، انڈونیشیا، یونان کے علاوہ اقوام متحدہ کے اداروں جیسے یو این ایف پی اے، ڈبلیو ایچ او، ایف اے او، یونیسیف، یو این ایچ سی آر اور ڈبلیو ایف پی سے امداد موصول ہوئی ہے۔

مزید پڑھیں: سیلاب متاثرین کیلئے اقوام متحدہ کی ہنگامی اپیل پر 3 کروڑ 80 لاکھ ڈالر جمع

ایک سرکاری بیان میں کہا گیا ہے کہ ای اے ڈی نے رپورٹ کیا کہ پاکستان اس وقت سیلاب زدہ علاقوں میں لوگوں کو خوراک، پناہ گاہ، طبی سہولیات، مچھر دانی وغیرہ فراہم کر کے فوری امدادی سرگرمیوں کے پہلے مرحلے میں ہے۔

اجلاس میں این ڈی ایم اے نے شرکا کو ملک پر سیلاب کے اثرات اور امدادی سامان کی تقسیم کے طریقہ کار سے آگاہ کیا۔

حمیر کریم نے شرکا کو بتایا کہ سیلاب سے ہونے والے نقصانات اور حقیقی امدادی ضروریات کی مکمل تصویر فراہم کرنے کے لیے 15 اکتوبر تک امدادی رپورٹ تیار کر لی جائے گی۔

حکومت پہلے ہی سیلاب سے بچاؤ کی کوششوں کے لیے 30 کروڑ 3 لاکھ ڈالر کے ڈونر فنڈز کو ری ڈائریکٹ کر چکی ہے جس میں عالمی بینک کے جاری پروگرام سے پائپ لائن میں 30 کروڑ ڈالر اور ایشیائی ترقیاتی بینک سے 30 کروڑ ڈالر کے فنڈ شامل ہیں، جس نے بحالی اور تعمیر نو کے لیے پاکستان کو فوری ادائیگی کے لیے آئندہ ماہ ڈیڑھ ارب ڈالر کی منظوری دینے کا وعدہ کیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: افسوس کہ ہم نے ماضی میں آنے والے سیلاب سے بھی کچھ نہیں سیکھا

وفاقی اور صوبائی رپورٹوں کی بنیاد پر، ورلڈ بینک کا ایک کور گروپ، اے ڈی بی اور اقوام متحدہ کے ادارے جو کہ تقریباً 17 شعبوں کے 100 ماہرین پر مشتمل ہیں، سیلاب سے متعلق اسٹیئرنگ کمیٹی کے ساتھ مل کر کام کریں گے تاکہ بین الاقوامی بہترین طریقوں کے مطابق نقصانات کی تشخیص کی ضرورت کا جائزہ لیا جاسکے۔

تبصرے (0) بند ہیں