• KHI: Zuhr 12:33pm Asr 5:15pm
  • LHR: Zuhr 12:03pm Asr 4:59pm
  • ISB: Zuhr 12:09pm Asr 5:09pm
  • KHI: Zuhr 12:33pm Asr 5:15pm
  • LHR: Zuhr 12:03pm Asr 4:59pm
  • ISB: Zuhr 12:09pm Asr 5:09pm

وزیر خزانہ کا آئی ایم ایف سے پاکستان کیلئے زیادہ پالیسی سپورٹ کا مطالبہ

شائع October 16, 2022
وزیر خزانہ نے انسانی تباہی اور ملک کو ہونے والے نقصانات پر بھی روشنی ڈالی — تصویر: وزارت خزانہ ٹوئٹر
وزیر خزانہ نے انسانی تباہی اور ملک کو ہونے والے نقصانات پر بھی روشنی ڈالی — تصویر: وزارت خزانہ ٹوئٹر

وفاقی وزیر خزانہ سینیٹر اسحٰق ڈار نے پاکستان کو سیلاب کے باعث درپیش چیلنجز کے تناظر میں عالمی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) اور کثیرالجہتی عطیہ دہندگان سے ملک کے لیے زیادہ پالیسی سپورٹ کا مطالبہ کیا ہے۔

وزارت خزانہ سے جاری بیان کے مطابق وزیر خزانہ اسحٰق ڈار نے گورنر اسٹیٹ بینک واشنگٹن ڈی سی میں آئی ایم ایف کی منیجنگ ڈائریکٹر کرسٹالینا جارجیوا کے ساتھ ایم ای این اے پی (مشرق وسطیٰ، شمالی افریقہ، افغانستان اور پاکستان) کے اجلاس برائے وزرائے خزانہ اور گورنرز میں شرکت کے موقع پر کی۔

اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیر خزانہ نے آئی ایم ایف پر زور دیا کہ وہ پاکستان کی صورتحال پر اپنا ردعمل تیار کرے۔

یہ بھی پڑھیں: اسحٰق ڈار امریکا روانہ، آئی ایم ایف، ورلڈ بینک کے سالانہ اجلاسوں میں شرکت کریں گے

انہوں نے یہ بھی مطالبہ کیا کہ ردعمل کی تیاری میں ان ممالک کو ماحولیات سے پیدا ہونے والی آفات کے پس منظر میں جن ملتے جلتے اقتصادی، سماجی اور سیاسی چیلنجز کا سامنا کرنا پڑتا ہے انہیں مدنظر رکھا جائے۔

اس موقع پر آئی ایم ایف کی منیجنگ ڈائریکٹر نے پاکستان کے تباہ کن سیلاب کا حوالہ دیتے ہوئے موسمیاتی تبدیلی کے واقعات سمیت علاقائی معیشتوں کو درپیش چیلنجز پر روشنی ڈالی۔

انہوں نے پاکستان کے ساتھ اپنی گہری ہمدردی کا اظہار کیا اور فنڈ کے مکمل تعاون کا یقین دلایا۔

مزید پڑھیں: پاکستان سمیت 54 ممالک کو قرضوں میں فوری ریلیف کی ضرورت ہے، اقوامِ متحدہ

وزیر خزانہ نے منیجنگ ڈائریکٹر آئی ایم ایف کے جذبات پر شکریہ ادا کیا اور درپیش چیلنجز کے باوجود فنڈز کے پروگرام کو مکمل کرنے کا عزم کیا۔

انہوں نے انسانی تباہی اور ملک کو ہونے والے نقصانات پر بھی روشنی ڈالی اور سیلاب سے تباہی کی شدت کو دیکھتے ہوئے پاکستان کے لیے مزید پالیسی تعاون کی درخواست کی۔

اسحٰق ڈار نے ممالک کی مدد کے لیے آئی ایم ایف کے نئے شعبوں ٹرسٹ سسٹین ایبلیٹی اینڈ ریزیلینس (ٹی ایس آر) اور ریپڈ فنانسنگ انسٹرومنٹ (آر ایف آئی) کے تحت فوڈ شاک ونڈو کا خیر مقدم کیا۔

وزیر خزانہ اور گورنر اسٹیٹ بینک نے آئی ایم ایف اور عالمی بینک کے سالانہ اجلاسوں کے موقع پر ہالینڈ کی ملکہ میکسیما سے مالیاتی شمولیت اور مساوات پر بینکاری کے حوالے سے تبادلہ خیال کیا۔

یہ بھی پڑھیں: پاکستان 27 ارب ڈالر کے قرضوں کی ادائیگی میں توسیع کا خواہاں ہے، وزیر خزانہ

ملاقات میں فریقین نے زیر بحث موضوعات میں تیزی سے پیش رفت حاصل کرنے کے لیے مل کر کام کرنے کے عزم کا اعادہ کیا۔

اس کے علاوہ وزیر خزانہ نے کویت فنڈ کے ڈائریکٹر جنرل مروان عبداللہ یوسف سے ملاقات کی اور پاکستان کی اقتصادی ترقی میں کویت فنڈ کے تعاون کو سراہا جبکہ جاری منصوبوں اور سرمایہ کاری کے ممکنہ نئے شعبوں پر تبادلہ خیال بھی کیا۔

ساتھ ہی ساتھ وزیر خزانہ نے ایشیائی ترقیاتی بینک (اے ڈی بی) کے سربراہ مساتسوگو اساکاوا سے بھی ملاقات کی۔

انہوں نے پاکستان کے ایک بڑے ترقیاتی پارٹنر کے طور پر کئی برسوں میں فراہم کی جانے والی مدد اور سیلاب کے بعد کے حالیہ وعدوں پر اے ڈی بی کے صدر کا شکریہ ادا کیا۔

اے ڈی بی کے صدر نے وزیر خزانہ کو ڈیڑھ ارب ڈالر کے بی آر اے سی ای پروگرام کی منظوری اور پاکستان کو مسلسل تعاون کی یقین دہانی کرائی۔

اسحٰق ڈار نے انٹرنیشنل فنانس کارپوریشن (آئی ایف سی) کے منیجنگ ڈائریکٹر مختار ڈیوپ سے بھی ملاقات کی، جنہوں نے پاکستان میں نجی شعبے کی ترقی کو فروغ دینے میں آئی ایف سی کے کردار کو سراہا۔

وزیر خزانہ نے پاکستان میں خاص طور پر تجارتی مالیات کے لیے آئی ایف سی کی شمولیت کو بڑھانے کے ممکنہ ذرائع پر بھی تبادلہ خیال کیا۔

انہوں نے اس سلسلے میں آئی ایف سی کو درکار تمام سہولتوں کی فراہمی کی یقین دہانی کرائی۔

مختار ڈیوپ نے وزیر خزانہ کو آئی ایف سی کی جانب سے پاکستان کے ساتھ تعاون جاری رکھنے کا یقین دلایا۔

کارٹون

کارٹون : 16 جون 2024
کارٹون : 15 جون 2024