• KHI: Zuhr 12:32pm Asr 5:14pm
  • LHR: Zuhr 12:02pm Asr 4:58pm
  • ISB: Zuhr 12:08pm Asr 5:08pm
  • KHI: Zuhr 12:32pm Asr 5:14pm
  • LHR: Zuhr 12:02pm Asr 4:58pm
  • ISB: Zuhr 12:08pm Asr 5:08pm

وکیل بننے کی خواہش رکھنے والے نوجوان نے سیاہ کوٹ پہننے کیلئے 100 کلو وزن کیسے کم کیا؟

— فوٹو: عرب نیوز
— فوٹو: عرب نیوز

کوئٹہ سے تعلق رکھنے والے احمد یار ہمایوں نے وکیل کا سیاہ کوٹ پہننے کے لیے حیران کن طور پر 165 کلو گرام وزن کم کیا، وکیل کا یونیفارم پہننے کی شدید خواہش رکھنے والے نوجوان لڑکے کی کہانی انہی کی زبانی سنیے۔

بیشتر وکلا کے لیے سیاہ کوٹ پہننا ایک معمول کی بات ہے جسے اٹارنی کا یونیفارم سمجھا جاتا ہے۔

احمد یار ہمایوں کے لیے اس خاص سوٹ میں فٹ ہونا محنت طلب تھا کیونکہ سیاہ کوٹ میں فٹ ہونے اور اپنے خواب کو پور کرنے کے لیے انہوں نے 20 ماہ میں 100 کلو گرام وزن کم کیا تھا۔

احمد یار نے عرب نیوز کو انٹرویو دیتے ہوئے بتایا کہ ’2020 میں جب میں قانون کی تعلیم حاصل کررہا تھا تو میرے دوست وکلا کے پیشہ ورانہ سیاہ یونیفارم کے بارے میں بات کیا کرتے تھے لیکن ایسی باتیں مجھے بہت افسردہ کرتی تھیں، سوچتا تھا کہ میں 165 کلو گرام وزن کے ساتھ یہ یونیفارم کیسے پہنوں گا۔‘

فوٹو: عرب نیوز
فوٹو: عرب نیوز

انہوں نے بتایا کہ مجھے وکیل بننے کا بہت شوق تھا، اس پیشے کی وجہ سے میری زندگی میں اہم موڑ اس وقت آیا جب میں سیاہ یونیفارم پہننے کے لیے 100 کلو گرام وزن کم کرنے میں کامیاب ہوگیا۔

احمد یار ہمایوں کے وزن میں اُس وقت غیر معمولی اضافہ ہوا جب وہ صرف 5 سال کے تھے، ان کا وزن اس قدر بڑھ گیا تھا کہ انہیں چلنے میں بھی انتہائی مشکل پیش آرہی تھی، کلاس میں دوستوں اور محلے کے بچوں کی جانب سے موٹاپے کا مذاق اڑانا اور طنزیہ باتیں برداشت کرنا احمد کے لیے آسان نہیں تھا۔

احمد کے والد ہمایوں صابر نے عرب نیوز کو انٹرویو میں بتایا کہ ’اس کے کچھ دوست اس کا مذاق اڑاتے تھے، ہم جماعت دوست اور محلے کے لڑکے اسے تنگ کرتے تھے، اس لیے ہم تھوڑا ذہنی طور پر دباؤ کا شکار تھے۔‘

کوئٹہ کے سٹی اسکول آف لا میں قانون کی تعلیم دینے والے بیرسٹر مظفر اعظم عمرانی نے یاد کرتے ہوئے کہا کہ احمد کے دوست اور اساتذہ اس کے وزن کے بارے میں بہت پریشان تھے کیونکہ یہی وزن احمد کی پیشہ ورانہ زندگی میں رکاوٹ پیدا کرسکتا تھا، احمد کے لیے چلنا بھی مشکل ہوگیا تھا۔

فوٹو: عرب نیوز
فوٹو: عرب نیوز

احمد نے اپنا وزن کیسے کم کیا؟

احمد کے والد نے بتایا کہ ’آج کے دور میں وزن کم کرنا معاشرے میں بہت سے لوگوں کے لیے مشکل کام ہے لیکن احمد یار نے اپنے مقصد کو حاصل کرنے کے لیے بہت محنت کی ہے اور ہم سب کے لیے مثال قائم کی ہے۔‘

اگرچہ وزن کم کرنے کے سفر کے دوران احمد کی فیملی نے کئی ڈاکٹرز اور مذہبی اسکالرز سے رجوع کیا تھا لیکن احمد نے سخت ڈائٹ پلان پر عمل کرتے ہوئے خود ہی اپنا وزن کیا۔

وزن کم کرنے کے لیے احمد ایک دن میں صرف ایک وقت کا کھانا کھاتا تھا، دو سال سے زائد عرصے تک گندم کھانا چھوڑ دی تھی، روزانہ دو گھنٹے جم جاتا تھا اور اکثر بیڈمنٹن کھیلتا تھا۔

احمد نے اپنے کھانے کی مقدار پر نظر رکھنے کے لیے اپنے موبائل فون پر کیلوریز کاؤنٹر کی ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کی اور موبائل فون پر فٹنس ایپ کو بھی فالو کیا اور دیگر رہنمائی کے لیے انہوں نے فیس بُک اور دیگر سوشل میڈیا پلیٹ فارمز سے مدد حاصل کی۔

فوٹو: عرب نیوز
فوٹو: عرب نیوز

احمد یار ہمایوں کہتے ہیں کہ ’یہ سب کچھ میں نے صرف ایک مقصد کو پانے کے لیے کیا تھا، میری شدید خواہش تھی کہ ایک دن میں وکیل کا سیاہ کوٹ پہنوں۔‘

انہوں نے کہا کہ ’وزن کم کرنے کے لیے وکیل کا یونیفارم پہن پر میں خود کو خوش قسمت محسوس کرتا ہوں اور ہمیشہ اللہ کا شکر ادا کرتا ہوں جس نے میرے مقصد کو حاصل کرنے میں میری مدد کی۔

اس وقت احمد یار ہمایوں کوئٹہ کی ضلعی عدالت کے وکیل ہیں۔

احمد کے ساتھ ان کے والد بھی اپنے بیٹے کی کامیابی پر بے حد خوش دکھائی دیے۔

ان کے والد نے بتایا کہ ’آج جب میں اپنے بیٹے کو وکیل کا یونیفارم پہن کر عدالت جاتے ہوئے دیکھتا ہوں تو مجھے بے حد خوشی ہوتی ہے۔

کارٹون

کارٹون : 12 جون 2024
کارٹون : 11 جون 2024