• KHI: Fajr 4:14am Sunrise 5:43am
  • LHR: Fajr 3:19am Sunrise 4:58am
  • ISB: Fajr 3:14am Sunrise 4:58am
  • KHI: Fajr 4:14am Sunrise 5:43am
  • LHR: Fajr 3:19am Sunrise 4:58am
  • ISB: Fajr 3:14am Sunrise 4:58am

اسلام آباد: خفیہ معلومات غیر ملکی سفارتکار کو دینے کے الزام میں ’اے ایس آئی‘ کو 3 سال قید کی سزا

شائع May 18, 2024
—فائل فوٹو: آئی این پی
—فائل فوٹو: آئی این پی

غیر ملکی سفیر کو خفیہ دستاویزات فراہم کرنے کے کیس میں آفیشل سیکریٹ ایکٹ کے تحت قائم کی گئی خصوصی عدالت نے اسلام آباد پولیس کے اسسٹنٹ سب انسپکٹر (اے ایس آئی) ظہور احمد کو 3 سال قید کی سزا سنادی۔

’ڈان نیوز‘ کی رپورٹ کے مطابق غیر ملکی سفیر کو خفیہ دستاویزات فراہم کرنے کے کیس کی سماعت ہوئی، آفیشل سیکریٹ ایکٹ کے تحت قائم کی گئی خصوصی عدالت کے جج طاہر عباس سپرا نے سماعت کی۔

سماعت کے دوران اسلام آباد پولیس کے اسسٹنٹ سب انسپکٹر (اے ایس آئی) ظہور احمد کے خلاف غیر ملکی سفیر کو خفیہ دستاویزات فراہم کرنے کا الزام ثابت ہوگیا۔

آفیشل سیکرٹ کی خصوصی عدالت نے کیس کا فیصلہ سناتے ہوئے پولیس اہلکار کو 3 سال قید کی سزا سنادی۔

عدالت کی جانب سے فیصلہ سنائے جانے کے بعد ظہور احمد کو کمرہ عدالت سے گرفتار کرلیا گیا۔

واضح رہے کہ 2021 میں ایف آئی اے کے انسداد دہشت گردی وِنگ نے غیر ملکی سفارتکار سے حساس معلومات کا تبادلہ کرنے والے اسلام آباد پولیس کے اسسٹنٹ سب انسپکٹر کو گرفتار کیا تھا، ملزم گولرا پولیس اسٹیشن میں بطور اے ایس آئی تعینات تھا اور ایجنسی اس کی نگرانی کر رہی تھی۔

ملزم کو خفیہ اطلاع پر گرفتار کیا گیا تھا، ایف آئی اے کو خبر موصول ہوئی تھی کہ ملزم میٹرو بس اسٹیشن جناح ایونیو پر غیر ملکی سفارتکار سے ملے گا اور معلومات اور اس سے متعلق دستاویزات فراہم کرے گا، جو کہ ملک مخالف عمل ہے۔

اطلاع کے ردعمل میں ایف آئی اے نے انسداد دہشت گردی وِنگ کے عہدیداران پر مشتمل ایک ٹیم تشکیل دی، ٹیم جیسے ہی موقع پر پہنچی تو انہیں معلوم ہوا کہ غیر ملکی سفارتکار نے اے ایس آئی کو کالے شیشوں والی گاڑی میں بٹھایا۔

ٹیم نے اسی علاقے میں پولیس اہلکار کا انتظار کیا، کچھ وقت بعد کار واپس آئی اور اے ایس آئی کو گاڑی سے اتار دیا جہاں سے انہیں حراست میں لے لیا گیا۔

اے ایس آئی سے دو موبائل فون، بٹوا، 50 ہزار روپے سے بھرا ایک لفافہ اور یو ایس بیز برآمد کی گئیں جبکہ افسران کے وضاحت طلب کرنے پر ملزم مطمئن کرنے میں ناکام رہا۔

حکام کا کہنا تھا کہ اے ایس آئی نے انکشاف کیا کہ اس نے غیر ملکی سفارتکار سے رقم لے کر اسے خفیہ معلومات اور دستاویزات فراہم کی ہیں۔

ایف آئی اے کی جانب سے جاری بیان میں تصدیق کی گئی کہ انہوں نے اے ایس آئی کو حراست میں لیا ہے اور ملزم کے خلاف تحقیقات شروع کردی گئی ہے۔

ایف آئی اے نے پولیس کو یقین دہانی کروائی تھی کہ وہ تفتیش کے دوران تمام قانونی ضوابط مکمل کریں گے، پولیس نے بھی تحقیقات میں مکمل تعاون فراہم کیا تھا۔

بعد ازاں جنوری 2022 میں ایڈیشنل سیشن جج فیضان حیدر گیلانی کی عدالت نے ایک لاکھ روپے مالیت مچلکوں کے عوض ظہور احمد کی درخواست ضمانت بعد از گرفتاری منظور کرلی تھی۔

کارٹون

کارٹون : 20 جون 2024
کارٹون : 17 جون 2024