تھائی لینڈ کی غار میں پھنسے 12 بچوں کا سراغ لگا لیا گیا

اپ ڈیٹ 03 جولائ 2018

Email


غار میں بھنسے بچے مٹی کے ٹیلے پر امداد کے منتظر ہیں— فوٹو: اے پی
غار میں بھنسے بچے مٹی کے ٹیلے پر امداد کے منتظر ہیں— فوٹو: اے پی

تھائی لینڈ کی غار میں پھنسے 12 لڑکوں اور ان کے فٹبال کوچ کے حوالے سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ وہ سب زندہ ہیں اور ایک غار میں صحیح حالت میں موجود ہیں۔

برطانوی نشریاتی ادارے بی بی سی کی رپورٹ کے مطابق تھائی لینڈ کی فوج کا کہنا تھا کہ غار میں پھنسے تمام لوگ زندہ ہیں لیکن انہیں واپسی کے لیے غوطہ خوری سیکھنا ہوگی یا پھر مہینوں سیلاب کے کم ہونے کا انتظار کرنا پڑے گا۔

خیال رہے کہ 12 نوجوانوں اور ان کے فٹبال کوچ پر مشتمل یہ گروپ 9 روز قبل لاپتہ ہوگیا تھا، جن کی نشاندہی کرنے کے لیے برطانیہ کے 2 غوطہ غوروں نے اہم کردار ادا کیا۔

مزید پڑھیں: کاروبارکے مواقع، تھائی لینڈ کے تاجروں کی پاکستان آمد

تاہم اس وقت گروپ کو بچانے والوں کے لیے سب سے اہم چیز ان تک رسد پہنچانا ہے کیونکہ ان کے لیے سب سے بڑا مسئلہ پانی کا بڑھنا ہے۔

لاپتہ افراد کا سراغ کیسے لگایا گیا؟

غار میں پھنسے افراد کی تلاش کے لیے تھائی نیوی کے خصوصی دستے نے گزشتہ رات آپریشن کا آغاز کیا، جس میں 2 برطانوی غوطہ خوروں نے بھی حصہ لیا۔

اس حوالے سے تھائی نیوی کی جانب سے فیس بک پر ایک ویڈیو پوسٹ کی گئی، جس میں لڑکوں کو پانی کے اوپر مٹی کے ٹیلے پر بیٹھا ہوا دکھایا گیا اور وہ غوطہ خوروں کو جواب دے رہے ہیں کہ وہ سب یہاں موجود ہیں اور انہیں بہت بھوک لگی ہے۔

اس دوران گروپ کی جانب سے غوطہ خوروں سے سوال کیا گیا کہ انہیں کب تک یہاں رہنا پڑے گا اور آیا وہ یہاں سے واپس جا پائیں گے؟ جس پر غوطہ خور انہیں کہتے ہیں کہ وہ انتظار کریں لوگ انہیں واپس لے جانے کے لیے آئیں گے۔

لاپتہ بچوں کے حوالے سے سامنے آنے والی ویڈیو نے قوم میں ایک امید کی کرن پیدا کردی جبکہ بچوں کے اہل خانہ بھی خوش ہیں کیونکہ اس سے قبل یہ واضح نہیں تھا کہ یہ لوگ کہاں ہیں اور آیا زندہ بھی ہیں یا نہیں۔

غار میں پھنسے افراد کس طرح واپس لایا جاسکتا ہے؟

تھائی لینڈ کی موجودہ صورتحال میں غار میں پھنسے ہوئے بچوں کو بحفاظت وہاں سے نکالنا سب سے خطرناک کام ہے۔

شمالی تھائی لینڈ میں تھم لوانگ غار کو بارش کے سیزن میں سیلابی صورتحال کا سامنا کرنا پڑتا ہے جو ستمبر یا اکتوبر تک جاری رہتا ہے۔

تاہم حکام کے مطابق اگر بچے اس وقت سے قبل واپس آنا چاہتے ہیں تو انہیں غوطہ خوری کی بنیادی تربیت سیکھنی ہوگی لیکن ماہرین کا کہنا ہے غیر تربیت یافتہ غوطہ خوروں کے لیے کیچڑ اور گندے پانی میں تیرنا انتہائی خطرناک ہوسکتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: تھائی لینڈ میں دوبارہ انتخابات کا اعلان مسترد

دوسری جانب اگر یہ بچے پانی کے کم ہونے تک انتظار کرتے ہیں تو اس کے لیے انہیں مہینوں انتظار کرنا پڑے گا اور اس دوران انہیں مسلسل خوراک اور دیگر چیزیں فراہم کرنی ہوں گی۔

یہ بچے کون ہیں؟

غار میں پھنسے 12 بچے مقامی فٹبال ٹیم کے کھلاڑی ہیں اور ان کے کوچ کبھی کبھار اس طرح کے دوروں پر انہیں لے جایا کرتے تھے۔

اس بارے میں ایک پھنسے ہوئے بچے کی والدہ کا کہنا تھا کہ وہ یہ سن کر بہت خوش ہیں کہ یہ لوگ محفوظ ہیں لیکن میں انہیں جسمانی اور دماغی طور پر ٹھیک دیکھنا چاہتی ہوں۔