پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما اور قومی اسمبلی کے سابق اپوزیشن لیڈر خورشید شاہ نے حالیہ انتخابات پر اپنے تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ الیکشن کا نتیجہ دیکھ کر ایسا معلوم ہوتا ہے کہ عمران خان کی ارینج میرج ہوئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ عمران خان کو جتوانے کے لیے ایک پنکچر نہیں بلکہ فل پنکچر لگائے گئے، انہوں نے دعویٰ کیا کہ یہ پنکچر عمران خان کے تمام حلقوں میں لگائے گئے ہیں۔

خورشید شاہ نے کہا کہ الیکشن کا پوسٹ مارٹم کرنا ہے تو صرف چند حلقے کھول لیں، انہوں نے دعویٰ کیا کہ یوسف رضا گیلانی، رسول بخش چانڈیو، فیصل صالح حیات، اعجاز جاکھرانی اور سعد رفیق کے حلقوں سمیت 35 حلقوں میں پنکچر لگائے گئے۔

بعد ازاں خورشید شاہ نے چیف الیکشن کمشنر سردار رضا سے ملاقات کرکے انہیں حالیہ انتخابات میں مختلف معاملات پر تحفظات سے آگاہ کیا۔

چیف الیکشن کمشنر سے ملاقات کے بعد خورشید شاہ نے میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ ’ہم نے چیف الیکشن کمشنر اور دیگر ممبران سے ملاقات کی اور ای سی پی کے سامنے اپنا موقف پیش کیا، جس کے جواب میں ہمیں آئین اور قانون کے مطابق تحفظات دور کرنے کی یقین دہانی کرائی گئی ہے‘۔

تاہم خورشید شاہ نے ملاقات کی مزید تفصیلات بتانے سے گریز کیا اور کہا کہ مسلم لیگ (ن) کی قیادت سے ملاقات کے بعد میڈیا کو تفصیلات سے آگاہ کریں گے۔

بعد ازاں پیپلز پارٹی کی خصوصی کمیٹی کا اجلاس ہوا جس کے اختتام پر پارٹی کی خصوصی کمیٹی کے ارکان مسلم لیگ (ن) کے رہنماوں سے ملاقات کے لیے روانہ ہوگئے۔

رپورٹ: فہد چوہدری

ضرور پڑھیں

تبصرے (0) بند ہیں