جنوبی افریقہ کو لگاتار تیسری شکست، بھارت پہلے ہی میچ میں کامیاب

اپ ڈیٹ 05 جون 2019

ای میل

بھارت کی جانب سے یزویندر چاہل  4وکٹیں لے کر سب سے کامیاب باؤلر رہے— فوٹو: اے ایف پی
بھارت کی جانب سے یزویندر چاہل 4وکٹیں لے کر سب سے کامیاب باؤلر رہے— فوٹو: اے ایف پی

بھارت نے ورلڈ کپ میں اپنے پہلے میچ میں جنوبی افریقہ کو شکست دے کر ایونٹ کا کامیابی سے آغاز کردیا ہے جبکہ لگاتار تین شکستوں کے بعد جنوبی افریقی ٹیم کی سیمی فائنل میں رسائی کی امیدیں ماند پڑنا شروع ہو گئی ہیں۔

ساؤتھ ہیمپٹن میں کھیلے گئے میچ میں جنوبی افریقہ نے ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کا فیصلہ کیا جو غلط ثابت ہوا۔

یہ بھی پڑھیں: برینڈن مک کولم نے ورلڈکپ کے تمام میچوں کی پیشگوئی کردی

پروٹیز بلے باز بھارتی باؤلر کے سامنے انتہائی مشکلات کا شکار دکھائی دیے، جنوبی افریقہ کی پہلی وکٹ 11 رنز پر گری، جب جسپرت بمرا نے ہاشم آملا کو 6 کے انفرادی اسکور پر روہت شرما کے ہاتھوں میدان بدر کیا۔

جس کے بعد کوئنٹن ڈی کاک بھی 11 رنز بناکر جسپرت بمرا کا شکار بنے، اس وقت جنوبی افریقہ کا مجموعی اسکور 24 تھا۔

بھارتی لیگ اسپنر چاہل نے پروٹیز کی تیسری اور چوتھی وکٹ یکے بعد دیگرے لی، انہوں نے ڈیر ڈوسین اور کپتان فاف ڈیوپلیسی کو کلین بولڈ کیا، دونوں کھلاڑیوں نے بالترتیب 22 اور 38 رنز کی اننگز کھیلیں۔

مزید پڑھیں: سر پر گیند لگنے کا مسئلہ، آئی سی سی کا نیا انقلابی قانون لانے کا فیصلہ

جنوبی افریقہ کی پانچویں وکٹ 89 رنز پر گری جب کلدیپ یادیو نے جے پی ڈومینی کو ایل بی ڈبلیو کیا۔

135 رنز کے مجموعے پر چاہل نے ڈیوڈ ملر کو اپنی ہی گیند پر کیچ آؤٹ کیا، انہوں نے 31 رنز کی مزاحمتی اننگز کھیلی۔

پروٹیز باؤلر آندلی پھلکوایو نے بلے بازی کا فرض نبھاتے ہوئے بھرپور مزاحمت کی اور 34 رنز بناکر چاہل کی گیند پر اسٹمپ آؤٹ ہوگئے۔

158 رنز پر 7 وکٹیں گرنے کے بعد امید تھی کہ جنوبی افریقی ٹیم کی بساط جلد لپٹ جائے گی لیکن اس مرحلے پر کرس مورس اور کگیسو ربادا ڈٹ گئے۔

دونوں کھلاڑیوں نے عمدہ بیٹنگ کا مظاہرہ کرتے ہوئے اپنی ٹیم کی ڈبل سنچری مکمل کرائی اور 66 رنز کی شراکت قائم کر کے قدرے بہتر مجموعے تک رسائی دلانے میں اہم کردار ادا کیا۔

آخری اوور میں مورس 42 رنز کی اننگز کھیلنے کے بعد پویلین لوٹے جبکہ اننگز کی آخری گیند پر عمران طاہر بھی پویلین لوٹ گئے۔

جنوبی افریقہ نے مقررہ اوورز میں 9 وکٹوں کے نقصان پر 227 رنز بنائے۔

بھارت کی جانب سے یزویندر چاہل 4 وکٹیں لے کر سب سے کامیاب باؤلر رہے جبکہ بمراہ اور بھوونیشور کمار نے 2، 2 وکٹیں لیں۔

ہدف کے تعاقب میں بھارتی ٹیم ابتدا میں ہی شیکھر دھاون کی خدمات سے محروم ہو گئی جبکہ کپتان فاف ڈیو پلیسی نے روہت شرما کا کیچ ڈراپ کر کے بھاری غلطی کی جس کا خمیازہ انہیں بعد میں بھگتنا پڑا۔

کپتان ویرات کوہلی اپنی روایتی فارم میں نظر نہ آئے اور مستقل جدوجہد کرتے دکھائی دیے اور بالآخر ان کی 18رنز کی اننگز ڈی کوک کے شاندار کیچ کے نتیجے میں اختتام پذیر ہوئی۔

تاہم دوسرے اینڈ سے روہت شرما نے بہترین بیٹنگ کا سلسلہ جاری رکھا اور لوکیش راہل کے ہمراہ تیسری وکٹ کے لیے 85 رنز کی اہم شراکت قائم کر کے اپنی ٹیم کو فتح کی راہ پر گامزن کیا، راہل نے ربادا کی وکٹ بننے سے قبل 26 رنز بنائے۔

روہت کا ساتھ دینے سابق کپتان مہندرا سنگھ دھونی آئے اور دونوں کھلاڑیوں نے مزید 74 رنز کی ساجھے داری قائم کرکے جنوبی افریقہ کی میچ میں واپسی کے تمام دروازے بند کردیے۔

روہت شرما نے شاندار سنچری اسکور کی جبکہ دھونی فتح سے چند قدم کے فاصلے پر کرس مورس کی گیند پر ان ہی کو کیچ دے بیٹھے۔

بھارت کو اس کے بعد فتح کے حصول میں دشواری کا سامنا نہیں کرنا پڑا اور اس نے 15 گیندوں قبل ہی ہدف حاصل کر کے ایونٹ میں 6 وکٹوں سے پہلی کامیابی حاصل کر لی۔

بھارت کے روہت شرما کو 122رنز کی ناقابل شکست اننگز تراشنے پر میچ کا بہترین کھلاڑی قرار دیا گیا۔

یہ جنوبی افریقہ کی ٹیم کی ورلڈ کپ میں لگاتار تیسری شکست ہے جس کے ساتھ ہی ان کی عالمی کپ میں پیش قدمی اور سیمی فائنل تک رسائی کی امیدوں پر سوالیہ نشان لگ گیا ہے۔

میچ کے لیے دونوں ٹیمیں ان کھلاڑیوں پر مشتمل تھیں۔

بھارت: روہت شرما، شیکھر دھون، ویرات کوہلی(کپتان)، لوکیش راہُل، کیدار جادھو، مہندرا سنگھ دھونی، ہردک پانڈیا، بھوونیشور کیمار، کلدیپ یادو، یزویندر چاہل اور جسپرت بمراہ۔

جنوبی افریقہ: کوئنٹن ڈی کوک، ہاشم آملا، فاف ڈیوپلیسی، راسی وین ڈر ڈوسین، ڈیوڈ ملر، جے پی ڈومینی، ایندائل پھلکوایو، کرس مورس، کگیسو ربادا، تبریز شمسی اور عمران طاہر۔