گوگل فوٹوز میں بگ سے صارفین کی ویڈیوز اجنبیوں کو منتقل

04 فروری 2020

ای میل

— فوٹو بشکریہ گوگل
— فوٹو بشکریہ گوگل

اگر آپ گوگل فوٹوز میں اپنی تصاویر اور ویڈیوز کو محفوظ کرتے ہیں تو بری خبر ہے۔

گوگل نے تسلیم کیا ہے کہ اس نے حادثاتی طور پر کچھ افراد کی ویڈیوز آرکائیو دیگر صارفین کو منتقل کردی ہیں۔

نائن ٹو فائیو گوگل کی رپورٹ کے مطابق کمپنی کی جانب سے صارفین کو خبردار کیا گیا ہے کہ گوگل ٹیک آﺅٹ (ایک ایپ جو دیگر گوگل سافٹ وئیر میں موجود ڈیٹا کے بیک اپ ڈاﺅن لوڈ میں مدد دیتی ہے) میں ایک 'تیکنیکی مسئلے' کے نتیجے میں گوگل فوٹوز میں محفوظ ویڈیوز دیگر افراد کی آرکائیوز میں منتقل ہوگئیں۔

گوگل کے مطابق اس مسئلے کا سامنا ان صارفین کو ہوا جنہوں نے 21 سے 25 نومبر 2019 کے دوران ٹیک آﺅٹ کی مدد سے ڈیٹا فوٹوز میں ایکسپورٹ کیا اور اب اس مسئلے پر قابو پالیا گیا ہے۔

اس بگ کی تفصیلات تاحال واضح نہیں اور متاثرہ صارفین کو بھیجے گئے نوٹس میں لکھا ہے 'آپ کے گوگل فوٹوز اکاﺅنٹ میں ایک یا اس سے زائد ویڈیوز اس مسئلے سے متاثر ہوسکتی ہیں'۔

کمپنی کی جانب سے صارفین سے کہا جارہا ہے کہ وہ 21 سے 25 نومبر کے دوران ڈاﺅن لوڈ کی جانے والی آرکائیوز کو ڈیلیٹ کردیں جبکہ یہ بھی مشورہ دیا گیا ہے کہ اس دورانیے میں ڈاﺅن لوڈ کی گئی آرکائیوز نامکمل یا دیگر افراد کے مواد پر مشتمل ہوسکتی ہے۔

گوگل کا کہنا ہے کہ اس مسئلے سے 0.01 فیصد صارفین ہی متاثر ہوئے، تاہم یہ اعدادوشمار مختلف ہوسکتے ہیں۔

گوگل کے ترجمان نے نائن ٹو فائیو گوگل کو بتایا کہ ہم نے متاثرہ افراد کو آگاہ کیا ہے جنہوں نے 21 سے 25 نومبر کے دوران گوگل ٹیک آﺅٹ سے گوگل فوٹوز میں مواد ایکسپورٹ کیا'۔

ترجمان کا کہنا تھا 'ہم نے اس مسئلے پر قابو پالیا ہے اور اب مستقبل میں اس کی روک تھام کے لیے گہرائی میں جاکر تجزیہ کررہے ہیں، ہم ایسا ہونے پر صارفین سے بہت معذرت کرتے ہیں'۔