ترکی: نگرانی پر مامور طیارہ پہاڑ سے ٹکرا کر تباہ، 7 سیکیورٹی اہلکار ہلاک

16 جولائ 2020

ای میل

جہاز نے مقامی وقت کے مطابق شام 6 بجکر 35 منٹ پر وان فیرت ملان ایئرپورٹ سے اڑان بھری تھی، سلیمان سولو — فوٹو: بشکریہ انادولو
جہاز نے مقامی وقت کے مطابق شام 6 بجکر 35 منٹ پر وان فیرت ملان ایئرپورٹ سے اڑان بھری تھی، سلیمان سولو — فوٹو: بشکریہ انادولو

ترکی کے صوبہ وان میں نگرانی اور فضائی معائنے کے لیے استعمال کیا جانے والا طیارہ پہاڑ سے ٹکرا کر تباہ ہونے کے نتیجے میں 7 سیکیورٹی اہلکار ہلاک ہوگئے۔

ترک نیوز ایجنسی 'انادولو' کی رپورٹ کے مطابق وزیر داخلہ سلیمان سولو نے مشرقی صوبے میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ 'ہماری ٹیموں نے مطلع کیا ہے کہ ہم حادثے میں 7 جانباز کھو چکے ہیں جن میں سے دو پائلٹس تھے۔'

انہوں نے کہا کہ طیارہ زمین سے تقریباً 2 ہزار 200 فٹ کی بلندی پر پہاڑ سے ٹکرایا، جہاز نے مقامی وقت کے مطابق شام 6 بجکر 35 منٹ پر وان فیرت ملان ایئرپورٹ سے اڑان بھری تھی۔

سلیمان سولو نے کہا کہ 2015 کے ماڈل کا طیارہ پیر سے وان اور ہاکاری صوبوں میں نگرانی اور معائنے کے مشن پر تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ طیارے کے پائلٹس نے آخری بار ٹاور سے اس وقت رابطہ کیا تھا وہ رات ساڑھے 10 بجے ضلع بسکالے کی طرف تھے۔

یہ بھی پڑھیں: ترکی: مسافر طیارہ رن وے سے پھسل کر 3 ٹکڑے ہوگیا، درجنوں افراد زخمی

وزیر داخلہ نے کہا کہ تقریباً پونے 11 بجے طیارے سے رابطہ مکمل طور پر منقطع ہوگیا تھا۔

انہوں نے بعد ازاں طیارے کو پیش آنے والے حادثے کے مقام کا دورہ کیا۔

واضح رہے کہ رواں سال فروری میں ترکی کے شہر استنبول کے ایئرپورٹ پر 177 مسافروں کو لے کر آنے والا طیارہ بے قابو ہو کر رَن وے سے پھسل گیا جس سے اس میں آگ لگ گئی اور جہاز تین ٹکڑے ہوگیا تھا۔

ترک حکام نے کہا کہ حادثے میں کوئی مسافر ہلاک نہیں ہوا، تاہم درجنوں افراد زخمی ہوئے۔

مزید پڑھیں: ترکی کا نجی طیارہ ایران میں گر کر تباہ، 11 افراد ہلاک

ترکی کے نشریاتی ادارے 'این ٹی وی' کی رپورٹ میں کہا گیا کہ بوئنگ 737 طیارہ ترکی کی پیگاسَس ایئرلائن کی ملکیت تھا جو استنبول کے سَبیحا گوچین ایئرپورٹ سے اِزمیر کے ساحلی شہر ایگان جارہا تھا۔

طیارے کو حادثہ بظاہر تیز ہوا اور شدید بارش کے باعث پیش آیا تھا۔