یوٹیوب پر مذہبی مواد مونیٹائز نہیں ہونا چاہیے، بلال مقصود

ای میل

گلوکار کی پوسٹ پر اکثر مداحوں نے بھی ان خیالات سے اتفاق کیا— اسکرین شاٹ
گلوکار کی پوسٹ پر اکثر مداحوں نے بھی ان خیالات سے اتفاق کیا— اسکرین شاٹ

میوزک بینڈ اسٹرنگز کے رکن اور نامور کمپوزر و گلوکار بلال مقصود نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ یوٹیوب پر مذہبی مواد کو مونیٹائز نہیں ہونا چاہیے۔

 حال ہی میں بلال مقصود نے یوٹیوب پر مذہبی مواد سے متعلق تشویش کا اظہار کیا ہے اور منافع بخش تنظیموں کی جانب سے مارکیٹنگ کے مقاصد سے اس میں مداخلت کو پریشان کن قرار دیا۔

انسٹاگرام پر ایک پوسٹ میں بلال مقصود نے لکھا کہ یوٹیوب پر سورتوں اور دعاؤں کو مونیٹائز نہیں ہونا چاہیے۔

مزید پڑھیں: شفاعت علی اور بلال مقصود بھی کورونا سے صحت یاب

بلال مقصود نے لکھا کہ تصور کریں آپ یوٹیوب پر سورۃ رحمٰن کی تلاوت سن رہے ہیں اور درمیان میں کسی لان یا کوکنگ آئل کا اشتہار آجائے، یہ انتہائی بے ادبی ہے۔

A photo posted by Instagram (@instagram) on

گلوکار کی پوسٹ پر اکثر مداحوں نے بھی ان خیالات سے اتفاق کیا اور کہا کہ انہیں بھی ایسی پریشانی کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

تاہم کچھ لوگوں نے بلال مقصود کی پوسٹ پر تنقید بھی کی اور کہا کہ یہ اشتہارات ان افراد کو مالی فائدہ پہنچانے کے لیے ہیں جنہوں نے دنیا تک کچھ اچھا پہنچانے کی کوشش کی ہے۔

خیال رہے کہ اس سے قبل یوٹیوب پر پابندی کے امکانات پر بھی بلال مقصود نے اپنے خیالات کا اظہار کیا تھا اور کہا تھا کہ یوٹیوب یا دیگر سوشل ایپس پر پابندی لگانا کسی بھی مسئلے کا حل نہیں ہے۔

یہ بھی پڑھیں: آج بھی اسکرپٹ پر اپنے نام کے ساتھ معین کا نام لکھ دیتا ہوں، انور مقصود

بلال مقصود نے کہا تھا کہ آج کے اِس جدید دور میں ان مسائل پر بات کرنے سے ہم اپنے ملک کو 20 سال پیچھے لے کر جارہے ہیں‘۔

انہوں نے مزید کہا تھا کہ جسے نامناسب مواد دیکھنا ہے وہ یوٹیوب کا محتاج نہیں ہے۔

A photo posted by Instagram (@instagram) on