آئی ایم ایف سے بات چیت محصولات کے نظام کی تجدید پر مرکوز

اپ ڈیٹ 22 نومبر 2020

ای میل

آئی ایم ایف کے ٹیکنکل مشن نے پاکستان کے موجودہ ٹیکس نظام کا تفصیلی مطالعہ کر کے بولڈ اور مضبوط تجاویز پیش کیں—فائل فوٹو: آئی ایم ایف
آئی ایم ایف کے ٹیکنکل مشن نے پاکستان کے موجودہ ٹیکس نظام کا تفصیلی مطالعہ کر کے بولڈ اور مضبوط تجاویز پیش کیں—فائل فوٹو: آئی ایم ایف

اسلام آباد: ایسے وقت میں کہ جب ملک کووِڈ 19 کی دوسری لہر سے نبرد آزما ہے، عالمی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) نے متعدد پالیسیوں کی تجویز دی ہے جس میں ٹیکس کی شرح کو معقول بنانے سے لے کر ٹیکس استثنٰی ختم کرنا اور ملک کے نظام ٹیکس میں تمام خرابیاں دور کرنا شامل ہے۔

ڈان اخبار کی رپورٹ کے مطابق فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) میں موجود ذرائع کا کہنا تھا کہ آئی ایم ایف کے ٹیکنکل مشن نے پاکستان کے موجودہ ٹیکس نظام کا تفصیلی مطالعہ کر کے بولڈ اور مضبوط تجاویز پیش کیں۔

ذرائع کے مطابق رپورٹ خفیہ ہے اور منظرِ عام پر نہیں لائی جاسکتی لیکن اس میں پالیسی تجاویز کے ساتھ نظام ٹیکس کے تمام پہلوؤں کا احاطہ کیا گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: تاجروں کیلئے فکسڈ ٹیکس کا معاملہ آئی ایم ایف کے سامنے اٹھانے کا فیصلہ

خیال رہے کہ گزشتہ برس دسمبر میں پہلی قسط کے اجرا کے بعد پاکستان نے آئی ایم ایف کو یہ یقین دہانی کروائی تھی کہ ایک تکنیکی ٹیم ٹیکس اسٹرکچر کا جائزہ لے گی اور عملدرآمد کے لیے حکومت کو اقدامات کی تجویز دے گی۔

ذرائع کا کہنا تھا کہ ہمیں تکنیکی ٹیم سے رپورٹ موصول ہوچکی ہے۔

حکومت نے آئی ایم ایف سے وعدہ کیا تھا کہ ریونیو کو وسیع کرنے اور ریونیو کے ذرائع تلاش کرنے کے لیے ایک منصوبہ تیار کیا جائے گا۔

رپورٹ کے مواد کی معلومات رکھنے والے ذرائع نے کہا کہ اس میں پورے ٹیکس ڈھانچے کا احاطہ کیا گیا ہے اور حکومت کو فوری طور پر چند چیزوں پر عملدرآمد کی تجویز بھی دی گئی ہے۔

مزید پڑھیں:آئی ایم ایف: پاکستان میں بیروزگاری بڑھنے، شرح نمو ایک فیصد رہنے کی پیش گوئی

رپورٹ کا زیادہ زور 3 چیزوں پر ہے جہاں ٹیکس کی شرح بہت زیادہ ہے اسے معقول بنانا، ٹیکس استثنیٰ پر نظر ثانی اور رعایت شامل ہے۔

ذرائع کے مطابق رپورٹ میں بہت سی ایسی چیزوں کی نشاندہی کی گئی ہے جن کے بارے میں مشن سمجھتا ہے کہ وہ بین الاقوامی طریقہ کار سے مطابقت نہیں رکھتیں۔

رپورٹ میں سیلز ٹیکس سے متعلق بھی کچھ تجاویز بھی شامل کی گئی ہیں لیکن حکومت کا ماننا ہے کہ اس کا مہنگا اثر ہوگا، اس وقت توجہ کارپوریٹ انکم ٹیکس استثنیٰ اور رعایت کی نظرِ ثانی پر دی جائے گی، ایف بی آر نے اعتراف کیا کہ انکم ٹیکس کے معاملات میں استثنیٰ بہت زیادہ ہے۔

یہ بھی پڑھیں:پاکستان کا قرضہ کم ہوکر جی ڈی پی کا 84.7 فیصد ہوگیا، آئی ایم ایف

ذرائع کا مزید کہنا تھا کہ 'ہم نے اس پر کچھ کام کرلیا ہے اور آنے والے دنوں میں مزید کیا جائے گا' اور ان چیزوں میں عملدرآمد کا کام آئندہ سال سے عملدرآمد کے لیے اگلے مالی سال کے بجٹ میں کیا جائے گا۔