• KHI: Maghrib 7:25pm Isha 8:54pm
  • LHR: Maghrib 7:11pm Isha 8:50pm
  • ISB: Maghrib 7:22pm Isha 9:06pm
  • KHI: Maghrib 7:25pm Isha 8:54pm
  • LHR: Maghrib 7:11pm Isha 8:50pm
  • ISB: Maghrib 7:22pm Isha 9:06pm

ججز کو پلاٹوں کی الاٹمنٹ کے خلاف فیصلہ سپریم کورٹ میں چیلنج

شائع October 10, 2021
اتھارٹی نے سپریم کورٹ کو یاد دلایا کہ ہائی کورٹ کے سامنے درخواست گزاروں نے زمین کے حصول کو چیلنج نہیں کیا تھا—سپریم کورٹ ویب سائٹ
اتھارٹی نے سپریم کورٹ کو یاد دلایا کہ ہائی کورٹ کے سامنے درخواست گزاروں نے زمین کے حصول کو چیلنج نہیں کیا تھا—سپریم کورٹ ویب سائٹ

اسلام آباد: فیڈرل گورنمنٹ ایمپلائز ہاؤسنگ اتھارٹی (ایف جی ای ایچ اے) نے اسلام آباد ہائیکورٹ کے اس حکم کے خلاف سپریم کورٹ سے رجوع کرلیا جہاں ہائی کورٹ اور ڈسٹرکٹ عدالتوں میں خدمات انجام دینے والے یا جوڈیشل افسران کے حق میں الاٹمنٹ معطل کردی گئی تھی۔

ڈان اخبار کی رپورٹ کے مطابق وکیل محمد اکرم شیخ کے ذریعے سپریم کورٹ میں ایک اپیل میں ایف جی ای ایچ اے نے آئی ایچ سی کے 20 اگست کے حکم کو کالعدم قرار دینے کی استدعا کی۔

مزید پڑھیں: بیوروکریٹس اور ججوں کو ایک سے زائد پلاٹوں کی الاٹمنٹ غیر قانونی قرار

اپنے حکم میں ہائی کورٹ نے نہ صرف معاملے کو مزید سماعت کے لیے ایک بڑے بینچ کے سامنے طے کیا تھا بلکہ اس بات پر بھی حیرت کا اظہار کیا تھا کہ اسلام آباد سیکٹر ایف 14 اور ایف 15 میں پلاٹوں کی الاٹمنٹ کے حوالے سے رائے شماری میں اسلام آباد ضلعی عدالت کا ہر عدالتی افسر کا نام تھا۔

ہائی کورٹ نے یہ بھی کہا تھا کہ یہ معاملہ مفادات کے تصادم کے حوالے سے سنجیدہ سوالات اٹھاتا ہے کیونکہ فائدہ حاصل کرنے والوں کو پلاٹ موجودہ مارکیٹ ریٹ سے کافی کم قیمتوں پر دیے گئے تھے اور اس طرح ہر فائدہ اٹھانے والے کے مالی مفادات تھے۔

عدالت نے مشاہدہ کیا تھا کہ مستحقین کی فہرست میں وہ جوڈیشل افسران بھی شامل ہیں جنہیں بدعنوانی یا بدعنوانی کی وجہ سے برطرف کیا گیا تھا۔

یہ بھی پڑھیں: کسی جج نے پلاٹ الاٹمنٹ کیلئے درخواست نہیں دی، رجسٹرار اسلام آباد ہائیکورٹ

ایف جی ای ایچ اے نے اپنی اپیل میں استدعا کی کہ آئی ایچ سی آئین کے آرٹیکل 199 کے تحت ازخود دائرہ اختیار استعمال نہیں کر سکتی اور یہ کہ ہائی کورٹ صرف ایک فریق کی درخواست پر اس شق کو درخواست دے سکتی ہے۔

اتھارٹی نے سپریم کورٹ کو یاد دلایا کہ ہائی کورٹ کے سامنے درخواست گزاروں نے زمین کے حصول کو چیلنج نہیں کیا تھا۔

عدالت عظمیٰ کی توجہ اس سوال کی طرف مبذول کرائی گئی کہ کیا ایف جی ای ایچ اے کے لیے زمین حاصل کی جا سکتی تھی اور اس کے حصول کے بعد کون اتھارٹی کے لیے حاصل کی گئی زمین سے نکلے ہوئے پلاٹوں کی الاٹمنٹ کا حقدار ہے؟

اتھارٹی نے مزید کہا کہ چونکہ آئی ایچ سی کے سامنے اٹھائے جانے والے تمام متنازع مسائل کو سپریم کورٹ کے بڑے بینچ نے قابل تعریف وضاحت کے ساتھ مناسب طریقے سے حل کیا تھا، آئی ایچ سی کا حکم قانون میں پائیدار نہیں تھا۔

مزید پڑھیں:اسلام آباد ہائی کورٹ نے وفاقی دارالحکومت کے نئے سیکٹرز میں ججز کو پلاٹوں کی الاٹمنٹ معطل کردی

ایف جی ای ایچ اے نے اپیل میں کہا کہ یہ ایک سرکاری ادارہ ہے جو وفاقی حکومت کے ملازمین اور ریٹائرڈ افراد کو پناہ دینے کے مشن کے ساتھ کام کر رہا ہے لیکن اسے غیر فعال بنا دیا گیا ہے اور اسے ذاتی مفادات کے ذریعے میڈیا میں بدنام کیا جا رہا ہے۔

اپیل کے مطابق آئی ایچ سی کے حکم نے اسلام آباد اور دیگر دارالحکومتوں میں ایف جی ای ایچ اے سکیمز اور الاٹیز کے اراکین میں شدید تشویش پیدا کی۔

کارٹون

کارٹون : 23 جون 2024
کارٹون : 22 جون 2024