پاکستان سپر لیگ میں کراچی کنگز کی مسلسل تیسری شکست پر کپتان عماد وسیم نے شائقین کو یقین دلایا کہ وہ ٹورنمنٹ میں آخر تک ہار نہیں مانیں گے، تینوں میچز ہاتھ میں تھے لیکن فنش نہیں کرپائے۔

گزشتہ روز کوئٹہ گلیڈی ایٹرز نے کراچی کنگز کو سنسنی خیز مقابلے کے بعد 6 رنز سے شکست دے کر ایونٹ میں پہلی کامیابی حاصل کر لی تھی، کراچی کنگز کو مسلسل تیسری شکست کا سامنا کرنا پڑا۔

میچ کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کراچی کنگز کے کپتان عماد وسیم نے تسلیم کیا کہ ’ہم نے غلطیاں کیں جس کی وجہ سے ہمیں مسلسل تین میچز میں شکست کا سامنا کرنا پڑا‘۔

انہوں نے کہا کہ ’بطور کپتان مجھ پر کوئی دباؤ نہیں ہے، چاہے ہم ہاریں یا جیتیں میں آپ کو یقین دلاتا ہوں کہ جب تک ہم ٹورنامنٹ سے باہر نہیں ہو جاتے ہم ہار نہیں مانیں گے۔

یاد رہے کہ کراچی کنگز نے پی ایس ایل 7 میں بابر اعظم کی کپتانی میں 10 میں سے 9 میچ ہارے تھے، تاہم رواں سال بھی کراچی کنگز کا پی ایس ایل 8 کا آغاز بھی اچھا نہیں رہا، ٹیم کو مسلسل 3 میچز میں شکست کا سامنا ہے۔

عماد وسیم نے کہا کہ ابتداء میں ہم نے اچھی بولنگ کی مگر آخر میں اچھی بولنگ نہیں ہوئی، جو ہدف تھا اس کا تعاقب ہونا چاہیے تھا، ہماری ٹیم فنش نہیں کر پارہی، فنشنگ کا مسئلہ ہے۔

عماد وسیم نے کہا کہ مارٹن گپٹل کی اننگز بہت شاندار تھی، ٹی ٹوئنٹی میں اہم ہے کہ اچھے اسٹارٹ کے بعد اچھا فنش کریں۔

انہوں نے مزید کہا کہ اب ہماری توجہ اپنے آنے والے میچ پر ہے، تاکہ کامیاب ہوسکیں، اچھی ٹیمیں مشکل وقت میں کم بیک کرتی ہیں، ہم پلے آف کے لیے کوالیفائی کرنے کی پوری کوشش کریں گے۔

عماد وسیم کا بابر اعظم سے متعلق بات کرنے سے انکار

عماد وسیم نے محمد عامر کا دفاع کرتے ہوئے کہا کہ فاسٹ بولر کا ایگریشن ہوتا ہے، اگر غلط کیا ہوتا تو ریفری عامر پر جرمانہ کرتے، عامر کے ساتھ کوئی فاسٹ بولر ایسا نہیں جو وکٹ لے کر دے، پلیئرز کو مضبوط ارادوں کا مظاہرہ کرنا ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ جب تک میچ آفیشلز کو عامر پر کوئی اعتراض نہیں ہے، مجھے بھی کوئی مسئلہ نہیں ہے۔

میچ کے بعد کی پریس کانفرنس میں عماد سے پوچھا گیا کہ کیا ان کی ٹیم زلمی کے خلاف بہت زیادہ ہنگامہ خیز مقابلے سے پریشان ہوگئی؟ تاہم کراچی کنگز کے کپتان نے زلمی کے کپتان بابر اعظم کے بارے میں بات کرنے سے انکار کردیا۔

عماد وسیم نے کہا کہ میڈیا پر جو کچھ بھی آتا ہے وہ مکمل سچ نہیں ہوتا، میں بابر کے بارے میں بات نہیں کرنا چاہتا، کیونکہ ہماری ٹیم جس طرح سے کھیل رہی ہے، ہمیں نتائج پر توجہ دینے کی ضرورت ہے’۔

واضح رہے کہ پشاور زلمی کے محمد حارث اور اسلام آباد یونائیٹڈ کے حسن نواز جیسے نوجوانوں کے خلاف جارحانہ رویہ دکھانے پر محمد عامر کو شدید تنقید کا سامنا کرنا پڑا۔

ایک ٹی وی شو میں سابق آل راؤنڈر شاہد آفریدی نے بھی محمد عامر کے رویے پر اظہار خیال کیا، شاہد آفریدی نے کہا کہ انہوں نے عامر سے بات کی کہ وہ اپنے جارحانہ رویے پر نظرثانی کریں اور کھیل پر توجہ دیں۔

واضح رہے کہ کراچی کنگز کا اگلا مقابلہ آج کراچی میں لاہور قلندرز سے ہو گا۔

ضرور پڑھیں

وزیراعظم کا انتخاب کس طرح ہوتا ہے؟

وزیراعظم کا انتخاب کس طرح ہوتا ہے؟

وزارت عظمیٰ کے لیے اگر کوئی بھی امیدوار ووٹ کی مطلوبہ تعداد حاصل کرنے میں ناکام رہا تو ایوان زیریں کی تمام کارروائی دوبارہ سے شروع کی جائے گی۔

تبصرے (0) بند ہیں