• KHI: Fajr 4:13am Sunrise 5:42am
  • LHR: Fajr 3:18am Sunrise 4:57am
  • ISB: Fajr 3:13am Sunrise 4:57am
  • KHI: Fajr 4:13am Sunrise 5:42am
  • LHR: Fajr 3:18am Sunrise 4:57am
  • ISB: Fajr 3:13am Sunrise 4:57am

کراچی: اورنگی ٹاؤن میں مبینہ چھاپے کے دوران ڈکیتی، پولیس افسر کا ایک روزہ جسمانی ریمانڈ

شائع November 22, 2023
پیرآباد تھانے میں مقدمہ تعزیرات پاکستان کی دفعہ 365، 395، 342 اور 34 کے تحت مقدمہ درج کیا گیا ہے— فائل فوٹو: رائٹرز
پیرآباد تھانے میں مقدمہ تعزیرات پاکستان کی دفعہ 365، 395، 342 اور 34 کے تحت مقدمہ درج کیا گیا ہے— فائل فوٹو: رائٹرز

کراچی کی مقامی عدالت نے اورنگی ٹاؤن میں تاجر کے گھر پر چھاپے کے دوران مبینہ ڈکیتی کے مقدمے میں ڈپٹی سپرنٹنڈنٹ پولیس(ڈی ایس پی) کو ایک روزہ جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کردیا۔

پولیس کی ٹیم ڈی ایس پی عمیر طارق کو بغیر ہتھکڑی کے سٹی کورٹ کے احاطے میں لائی اور ریمانڈ کے لیے جوڈیشل مجسٹریٹ کے سامنے پیش کیا۔

مقدمے کے تفتیشی افسر نے پوچھ گچھ اور مقدمے کی مزید تفتیش کے لیے زیر حراست ڈی ایس پی کو تحویل میں دینے کی استدعا کی۔

تاہم ملزم کے وکیل نے اس کی مخالفت کی اور دلیل دی کہ نہ تو ان کا مؤکل جائے وقوع پر موجود تھا اور نہ ہی اس کے قبضے سے کوئی ریکوری ہوئی۔

جوڈیشل مجسٹریٹ نے ملزم کو ایک روزہ جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کر دیا اور تفتیشی افسر کو ہدایت کی کہ اسے پیش رفت رپورٹ کے ساتھ آئندہ سماعت پر دوبارہ پیش کیا جائے۔

ایف آئی آر میں ڈی ایس پی اور دو گن مین کانسٹیبل خرم علی اور فرحان علی سمیت کئی دیگر نامعلوم پولیس اہلکاروں اور نجی افراد کو نامزد کیا گیا ہے، جنہوں نے مبینہ طور پر شکایت کنندگان کے گھر پر 18 اور 19 نومبر کی درمیانی شب چھاپہ مارا اور اہل خانہ کو بندوق کی نوک پر یرغمال بنایا۔

درخواست گزار نے کہا کہ ملزمان اس کے گھر سے تقریباً 2 کروڑ روپے اور دیگر قیمتی سامان لے گئے۔

ایف آئی آر میں مزید کہا گیا کہ ملزمان کارروائی کے بعد شکایت کنندہ شاکر خان اور بھائی عامر خان کو بھی ساتھ لے گئے اور بعد میں انہیں بلوچ کالونی پل کے قریب چھوڑ دیا۔

پیرآباد تھانے میں تعزیرات پاکستان کی دفعہ 365، 395، 342 اور 34 کے تحت مقدمہ درج کیا گیا ہے۔

ڈی ایس پی کا کوئی قصور نہیں، وہ موقع پر موجود نہیں تھے، وکیل

ملزم کے وکیل نے عدالت کے باہر میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ڈی ایس پی کا تو کوئی قصور ہی نہیں ہے، وہ تو زیر تربیت ڈی ایس پی ہے، اس کو ایس ایس پی جنوبی نے ہدایات دی تھیں کہ چھاپہ مارا جانا ہے اور تم اس کا فالو اپ لے لینا۔

انہوں نے کہا کہ ملزم نہ تو چھاپے پر گیا تھا اور نہ اس سے کوئی ریکوری ہوئی ہے، ایس ایچ او ڈیفنس نے مدعی کے ایک کروڑ 3 لاکھ 50 ہزار روپے، 12 موبائل فون اور دو لیپ ٹاپ واپس کیے ہیں اور مدعی نے لکھ کر دیا ہے کہ میری کوئی بھی چیز واجب الادا نہیں ہے، پولیس نے کوئی کارروائی کی ہو گی اور جو غلط ریکوری ہوئی ہے وہ اس کو واپس کر دی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ بعد میں انہوں نے انکوائری کی ہے اور ایک جھوٹی ایف آئی آر درج کی ہے۔

وکیل نے کہا کہ پولیس ٹیم ایس ایس پی کے حکم پر گئی تھی اور یہ ڈیس ایس پی ابھی ڈیوٹی پر نہیں بلکہ زیر تربیت ہیں، اس کے پاس کوئی نفری نہیں ہے، یہ کارروائی ڈی ایس پی جنوبی اور غربی کی مشاورت سے کی گئی تھی، میرا مؤکل وہاں موجود ہی نہیں تھا تو ان پر نہ ڈکیتی کا مقدمہ بنتا ہے اور نہ ہی اغوا کا بنتا ہے۔

ڈی ایس پی اور ایس ایس پی کے خلاف کارروائی کی سفارش

آئی جی سندھ رفعت مختار راجا کے حکم پر ڈی آئی جی غربی کیپٹن ریٹائرڈ عاصم خان کی جانب سے کی گئی انکوائری میں کہا گیا ہے کہ اورنگی ٹاؤن میں تاجر شاکر خان کی رہائش گاہ پر چھاپہ بدنیتی پر مبنی تھا۔

رپورٹ میں کہا گیا کہ حقائق جان بوجھ کر چھپانے کے ساتھ ساتھ اس طرح کے کام کے بارے میں غیر ذمہ دارانہ رویہ اس بات کی عکاسی کرتا ہے کہ ڈی ایس پی اپنے عملے اور نجی مخبروں کے ساتھ اس غیر قانونی اور مجرمانہ فعل کے لیے براہ راست ذمہ دار ہیں۔

انکوائری افسر نے سینئر افسران کو بھی غفلت کا مرتکب قرار دیتے ہوئے کہا کہ سینئر افسران بھی ڈی ایس پی کی غیر قانونی سرگرمیوں پر کڑی نظر نہ رکھنے کے ذمہ دار ہیں۔

رپورٹ میں کہا گیا کہ ان تمام حقائق، شواہد اور بیانات’ کی روشنی میں ڈی آئی جی کو سفارش کی جاتی ہے عمیر طارق کے خلاف مجرمانہ سرگرمیوں میں ملوث نجی افراد کے ہمراہ اس طرح کے گھناؤنے جرم میں براہ راست ملوث ہونے پر سخت محکمہ جاتی اور قانونی کارروائی عمل میں لائی جائے۔

رپورٹ میں شکایت کنندہ شاکر خان کے گھر ڈکیتی میں حصہ لینے والے نجی افراد کے خلاف سخت قانونی کارروائی کی بھی سفارش کی گئی ہے۔

اس کے علاوہ انکوائری رپورٹ میں ایس ایس پی جنوبی کے خلاف بھی کارروائی کی سفارش کرتے ہوئے کہا کہ ڈسٹرکٹ جنوبی کے پیشہ ورانہ تربیت یافتہ پولیس افسران کو چھاپہ مارنے کی ڈیوٹی نہ سونپنے پر ایس ایس پی جنوبی کے خلاف بھی مناسب کارروائی کی جائے۔

اورنگی ٹاؤن ڈکیتی کے بعد پولیس افسران کو عہدے سے ہٹا دیا گیا

ڈان اخبار میں شائع رپورٹ کے مطابق دو روز قبل اورنگی ٹاؤن میں تاجر کے گھر پر چھاپے کے دوران مبینہ طور پر ڈکیتی میں ملوث پائے جانے کے بعد دو پولیس افسران کو منگل کو ان کے عہدوں سے ہٹا دیا گیا تھا۔

منگل کو جاری ایک نوٹیفکیشن کے مطابق انسپکٹر جنرل آف پولیس (آئی جی پی) رفعت مختار راجا نے، ایس ایس پی جنوبی عمران قریشی اور ان کے زیر تربیت ڈی ایس پی عمیر طارق بجاری کو ان کے عہدوں سے ہٹا دیا گیا ہے۔

نوٹیفکیشن میں کہا گیا تھا کہ ایس ایس پی عمران قریشی کا تبادلہ کر دیا گیا ہے اور انہیں سینٹرل پولیس آفس رپورٹ کرنے کی ہدایت کی گئی ہے تاہم نوٹیفکیشن میں دونوں افسران کو عہدے سے ہٹانے کی کوئی وجہ نہیں بتائی گئی تھی۔

اس تمام واقعے سے باخبر دو افسران نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر ڈان کو بتایا تھا کہ ڈی ایس پی عمیر طارق بجاری کی سربراہی میں ساؤتھ پولیس کی ایک ٹیم نے حال ہی میں اورنگی ٹاؤن میں ایک تاجر کے گھر پر چھاپہ مارا تھا۔

پولیس ٹیم چھاپے کے دوران بھاری مقدار میں نقدی اور زیورات کے ساتھ ساتھ ڈیجیٹل ویڈیو ریکارڈر بھی ساتھ لے گئی تھی تاکہ سی سی ٹی وی فوٹیج کو غائب کیا جا سکے، تاہم گلی میں نصب دیگر سی سی ٹی وی کیمروں کی فوٹیج کی مدد سے انہیں بے نقاب کرنے میں مدد ملی۔

اس واقعے پر سوشل میڈیا صارفین نے شدید غم و غصے کا اظہار کیا تھا جس کے بعد آئی جی سندھ پولیس نے کارروائی کرتے ہوئے انکوائری ٹیم تشکیل دی تھی جس کی قیادت ڈی آئی جی غربی عاصم خان کر رہے ہیں۔

حکام نے بتایا کہ ڈی آئی جی غربی نے آئی جی کو تفصیلی رپورٹ پیش کی تھی اور اسی تحقیقات کے نتائج کی روشنی میں ایس ایس پی اور ڈی ایس پی دونوں کو ہٹا دیا گیا۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق پولیس وردی میں ملبوس افراد سمیت ایک درجن سے زائد افراد نے اورنگی ٹاؤن میں ایک گھر پر چھاپہ مارا اور اہل خانہ کو اسلحے کے زور پر یرغمال بنا کر 2 کروڑ روپے، 70 سے 80 تولے سونا اور دیگر قیمتی سامان چوری کر لیا تھا۔

سوشل میڈیا پر معاملہ گرم ہونے اور آئی جی کی جانب سے ایک کمیٹی تشکیل دینے کے بعد متعدد پولیس اہلکاروں نے لوٹی گئی نقدی اور زیورات کا کچھ حصہ متاثرین کو واپس کر دیا تھا۔

رپورٹس کے مطابق ملزمان نے مبینہ طور پر سی سی ٹی وی فوٹیج میں شناخت کیے گئے افراد کے خلاف ایف آئی آر درج نہ کرنے کے لیے متاثرہ اہل خانہ پر دباؤ بھی ڈالا تھا۔

کارٹون

کارٹون : 12 جون 2024
کارٹون : 11 جون 2024