'جب خدا نے اتنے حلال جانور بنائے ہیں تو چمگادڑ کیوں کھاتے ہیں'

اپ ڈیٹ 17 مارچ 2020

ای میل

شعیب اختر نے اپنے یوٹیوب چینل پر ویڈیو کے ذریعے چینی عوام کو تنقید کا نشانہ بنایا— فائل فوٹو: اسکرین شاٹ
شعیب اختر نے اپنے یوٹیوب چینل پر ویڈیو کے ذریعے چینی عوام کو تنقید کا نشانہ بنایا— فائل فوٹو: اسکرین شاٹ

سابق مایہ ناز فاسٹ باؤلر شعیب اختر نے عالمی سطح پر تیزی سے پھیلتے کورونا وائرس کے سبب پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل) متاثر ہونے پر مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے چین کے عوام کو تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔

یاد رہے کہ کورونا وائرس کے تیزی سے پھیلاؤ کے سبب پاکستان سپر لیگ کے شیڈول کو تبدیل کرتے ہوئے اس مین چار دن کی کمی کردی گئی ہے اور اب تک 14 نامور غیر ملکی کھلاڑی لیگ ادھوری چھوڑ کر وطن واپس لوٹ چکے ہیں۔

اپنے یوٹیوب چینل پر اس حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے شعیب اختر نے چینی عوام کی کھانے پینے کی عادات کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ مجھے سمجھ نہیں آتی جب اللہ نے حلال جانور بنائے ہیں تو آپ لوگ حرام کیوں کھاتے ہیں؟

مزید پڑھیں: کورونا سے کھیلوں کی سرگرمیاں متاثر ہونے کا سلسلہ جاری

انہوں نے اپنی گفتگو کا سلسلہ جاری رکھتے ہوئے کہا کہ جب خدا نے اتنے سارے حلال جانور بنائے ہیں تو آپ وہ کیوں نہیں کھاتے، آپ لوگ چمگادڑ، بلی، کتے کیوں کھاتے ہیں، ان کا پیشاب پینا ہے، خون پینا ہے اور پوری دنیا میں وائرس پھیلا دینا ہے، مجھے یہ بات سمجھ نہیں آرہی کیونکہ چینیوں نے پوری دنیا کو داؤ پر لگا دیا۔

'آپ نے عجیب عجیب چیزیں کھا کر اپنا تو بیڑا غرق کر لیا ہے اور اب ہمارا بھی بیڑا غرق ہونے والا ہے'۔

شعیب اختر نے کہا کہ مجھے سب سے زیادہ غصہ اس بات پر ہے کہ پاکستان میں پہلی مرتبہ پی ایس ایل آئی تھی لیکن اب کورونا کی وجہ سے غی ملکی کھلاڑی واپس جا رہے ہیں، لیگ اب تماشائیوں کے بغیر منعقد ہو گی۔

اس موقع پر انہوں نے بھارت اور بنگلہ دیش کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اللہ نہ کرے کہ بھارت اور بنگلہ دیش میں یہ وبا پھوٹ پڑے کیونکہ صرف ممبئی میں روزانہ 90 لاکھ افراد ٹرین میں سفر کرتے ہیں اور اگر خدا نخواستہ وہاں لوگ بیمار ہو گئے تو بھارت اور بنگلہ دیش کے ہسپتالوں میں جگہ ہی نہیں ہے۔

یہ بھی پڑھیں: غیر ملکی کھلاڑیوں کے جانے سے زیادہ نقصان کس ٹیم کا ہوا؟

شعیب اختر نے انڈین پریمیئر لیگ کے 15 اپریل تک التوا کو بھی افسوسناک قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس سے صرف اسٹار اسپورٹس نہیں بلکہ اس سے منسلک صنعتوں جیسے براڈ کاسٹ، ہوٹلز اور دیگر کو بھی نقصان پہنچے گا۔

انہوں نے کہا کہ تیسری دنیا کے ممالک پاکستان، ہندوستان، بنگلہ دیش، سری لنکا میں زیادہ سہولیات میسر نہیں ہیں، اٹلی فرانس جیسے ممالک جہاں سہولیات میسر ہیں وہاں ہزاروں لوگ مر رہے ہیں۔

دنیا کے تیز ترین باؤلر کا اعزاز رکھنے والے سابق اسٹار نے وائرس کے مذہبی رسومات اور عقائد پر مرتب ہونے والے اثرات پر بھی برہمی کا اظہار کیا۔

انہوں نے کہا کہ وائرس کے سبب جمعے کی نماز ادا نہیں ہو رہی، مکہ مکرمہ میں طواف بند ہے جو میں نے کبھی بند ہوتے نہیں دیکھا، مکہ مکرمہ بالکل خالی ہے، سرحدیں بند کردی گئی ہیں، لوگوں کو جمعے کی نماز پڑھتے ہوئے ڈر لگ رہا ہے، اتنا دہشت گردی سے ڈر نہیں لگا جتنا کورونا وائرس سے ڈر لگ رہا ہے۔

مزید پڑھیں: کورونا وائرس نے کھیل کی دنیا کو بھی نہیں بخشا!

ان کا کہنا تھا کہ اس وائرس کے سبب پوری دنیا کی معیشت ٹھپ ہو چکی ہے، 50 ارب ڈالر سے زائد کا نقصان ہو چکا ہے، کاروبار بند ہو گئے ہیں، تیل نیچے آ گیا اور لوگوں کی نوکریاں ختم ہو رہی ہیں۔

یاد رہے کہ دنیا بھر میں تیزی سے پھیلتے کورونا وائرس کے سبب اب تک 5 ہزار سے زائد افراد لقمہ اجل بن چکے ہیں۔

اس وائرس نے چین سے جنم لیا تھا جہاں ساڑھے تین ہزار سے زائد افراد کی ہلاکت کے بعد اب اس پر قابو پالیا گیا ہے لیکن اب یہ وائرس یورپ میں تیزی سے پھیل رہا ہے۔

عالمی ادارہ صحت نے اس وائرس کو عالمی وبا قرار دیتے ہوئے اس کا نیا مرکز یورپ کو قرار دے دیا ہے۔

اٹلی میں اب تک ایک ہزار سے زائد افراد اس وائرس کی بھینٹ چڑھ چکے ہیں اور پورے اٹلی کے ساڑھے 6 کروڑ عوام کو گھروں تک محدود کردیا گیا ہے۔

پاکستان سپر لیگ کی طرح دنیا بھر میں کھیلوں کی سرگرمیاں متاثر ہوئی ہیں اور ایشیا یورپ سمیت دنیا بھر میں تمام لیگز، ڈومیسٹک اور انٹرنیشنل مقابلے رواں ماہ کے آخر تک منسوخ کر دیے گئے ہیں۔