سری لنکا کیخلاف سیریز قومی ٹیم کا اعلان، عمر اکمل اور احمد شہزاد ڈراپ

اپ ڈیٹ 21 ستمبر 2019

ای میل

اسکواڈ کا اعلان چیف سلیکٹر نے لاہور میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کیا۔ — فوٹو: اے ایف پی
اسکواڈ کا اعلان چیف سلیکٹر نے لاہور میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کیا۔ — فوٹو: اے ایف پی

سری لنکا کے خلاف ون ڈے اور ٹی20 سیریز کے لیے قومی ٹیم کا اعلان کردیا گیا ہے اور عمر اکمل اور احمد شہزاد سیریز کے لیے اسکواڈ میں جگہ بنانے میں ناکام رہے۔

لاہور میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے قومی ٹیم کے چیف سلیکٹر اور ہیڈ کوچ مصباح الحق نے سری لنکا کے خلاف ون ڈے اور ٹی20 سیریز کے لیے قومی ٹیم کے اسکواڈ کا اعلان کیا۔

مزید پڑھیں: کپتانوں سمیت 10اہم سری لنکن کھلاڑیوں کا دورہ پاکستان سے انکار

مصباح نے کہا کہ سلیکشن کمیٹی اراکین سے طویل مشاورت اور منصوبہ بندی کے بعد میں محسوس کرتا ہوں کہ ہم نے بہترین دستیاب اسکواڈ تشکیل دیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ اس سیزن ہم نے صرف 50اوورز کے میچز کھیلنے ہیں اس لیے ہم اس سے زیادہ سے زیادہ فائدہ اٹھانا چاہتے ہیں، میں نے اپنے پورے کیریئر میں یہ سیکھا ہے کہ کوئی بھی میچ آسان یا حریف آسان نہیں ہوتا۔

ہیڈ کوچ اور چیف سلیکٹر نے مزید کہا کہ محمد رضوان، عابد علی اور عثمان شنواری عمدہ کارکردگی کے باوجود بدقسمتی سے ورلڈ کپ اسکواڈ میں جگہ نہ بنا سکے اور ان کی مستقل اچھی کارکردگی کو مدنظر رکھ کر انہیں ٹیم میں دوباہر شامل کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ سیریز نوجوان کھلاڑیوں کے اپنی اہلیت کا لوہا منوانے اور ون ڈے ٹیم میں اپنی جگہ پکی کرنے کا بہترین موقع ہے۔

مصباح نے کہا کہ حسن علی سیریز کے لیے اسکواڈ کا حصہ تھے لیکن کل ان کو کمر میں تکلیف محسوس ہوئی جس کے بعد فزیو کے مشورے انہیں سیریز کے لیے آرام دینے کا فیصلہ کیا گیا اور وہ بحالی کے عمل سے گزرنے کے بعد اب قومی ٹیم کا حصہ بنیں گے۔

سیریز کے لیے قومی ٹیم کی قیادت سرفراز احمد کریں گے جبکہ دیگر کھلاڑیوں میں بابر اعظم، امام الحق، عابد علی، آصف علی، فخر زمان، حارث سہیل، افتخار احمد، عماد وسیم، شاداب خان، وہاب ریاض، محمد رضوان، محمد عامر، محمد حسنین، عثمان شنواری اور محمد نواز شامل ہیں۔

چیف سلیکٹر اور ہیڈ کوچ نے کہا کہ اب تک عماد وسیم ہی ہمارے پاس ایک ایسے کھلاڑی تھے جو باؤلنگ کرنے کے ساتھ ساتھ نچلے نمبروں پر آ کر اچھی اور جارحانہ بیٹنگ بھی کر رہے تھے لیکن ہم نے مستقبل کو مدنظر رکھتے ہوئے محمد نواز کو تیار کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: ’دورہ پاکستان پر بھارت کی سری لنکن کھلاڑیوں کو آئی پی ایل سے باہر کرنے کی دھمکی‘

انہوں نے کہا کہ حالیہ عرصے میں محمد نواز کی کارکردگی اچھی رہی ہے اور وہ فرسٹ کلاس کے ساتھ ساتھ حال ہی میں قائد اعظم ٹرافی میں بھی اچھے کھیل کا مظاہرہ کر چکے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ شعیب ملک ریٹائر ہو چکے ہیں اور محمد حفیظ بھی سیریز کے لیے دسیتاب نہیں تھے اور اسی وجہ سے ہم نے افتخار احمد کو ٹیم کا حصہ بنایا ہے کیونکہ وہ آف اسپن باؤلنگ کی اضافی خوبی کے حامل ہیں، ماضی میں شعیب ملک اور محمد حفیظ کی موجودگی کی وجہ سے ان کی ٹیم میں جگہ نہیں بنتی تھی لیکن اب دونوں تجربہ کار کھلاڑی موجود نہ ہونے کے سبب افتخار احمد کو ان کے متبادل کے طور پر ٹیم کا حصہ بنایا گیا ہے۔

مصباح الحق نے ورلڈ کپ میں ناقص کارکردگی کا مظاہرہ کرنے والے فخر زمان کا دفاع کرتے ہوئے کہا کہ گزشتہ کچھ عرصے سے فخر کی کارکردگی اچھی نہیں رہی لیکن وہ اس سے قبل مسلسل ایک ڈیڑھ سال اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کر چکے ہیں، ان کی ون ڈے کرکٹ میں 47 کی اوسط ہے لہٰذا چند میچز کی خراب کارکردگی کی بنیاد پر انہیں ٹیم سے ڈراپ نہیں کیا جا سکتا۔

مزید پڑھیں: سری لنکا کا پاکستان میں 3ون ڈے اور 3ٹی ٹوئنٹی کھیلنے کا اعلان

پاکستان اور سری لنکا کے درمیان ون ڈے اور ٹی20 سیریز کا آغاز 27 ستمبر سے کراچی میں ہو گا جہاں اس سیریز کے ذریعے پاکستان میں عالمی کرکٹ کی واپسی ہو گی اور تقریباً ایک دہائی کے عرصے کے بعد پہلی مرتبہ لگاتار دو سیریز کھیلی جائیں گی۔

سری لنکن ٹیم پاکستان آمد کے بعد 27 ستمبر کو پہلا ون ڈے میچ کراچی میں کھیلے گی جس کے بعد سیریز کے بقیہ ون ڈے میچز بالترتیب 29 ستمبر اور 2 اکتوبر کو کراچی کے نیشنل اسٹیڈیم میں کھیلے جائیں گے۔

دونوں ٹیموں کے درمیان پہلا ٹی20 میچ 5 اکتوبر کو لاہور میں کھیلا جائے گا جس کے بعد بقیہ دونوں میچز کی میزبانی کی بھی قذافی اسٹیڈیم 7 اور 9 اکتوبر کو کرے گا۔