میکسیکو: وعدے پورے نہ کرنے پر میئر کو گاڑی میں باندھ کر شہر میں گھمایا گیا

اپ ڈیٹ 09 اکتوبر 2019

ای میل

عوام نے میئر کو دفتر سے گھسیٹ کر باہر نکالا—فوٹو: بشکریہ بی بی سی
عوام نے میئر کو دفتر سے گھسیٹ کر باہر نکالا—فوٹو: بشکریہ بی بی سی

میکسیکو کے جنوبی علاقے کے میئر کو وعدوں کے مطابق کام نہ کرنے پر علاقہ مکینوں نے دفتر سے زبردستی باہر نکالا اور گاڑی میں باندھ کر شہر میں گھمایا جس پر پولیس نے 11 افراد کو گرفتار کرلیا۔

برطانوی نشریاتی ادارے 'بی بی سی' کی رپورٹ کے مطابق پولیس نے ریاست چیپاس کے قصبے سینتا ریتا میں میئر جارج لوئس ہرنانڈیز کو دفتر سے نکال کر شہر میں گھمانے پر 11 افراد کو حراست میں لیا ہے۔

اطلاعات کے مطابق میئر جارج لوئس کو بظاہر کوئی زخم نہیں آئے تاہم انہیں بری طرح گھسیٹا گیا۔

میکسیکو کے شہریوں کی جانب سے میئر پر حملے کا یہ دوسرا واقعہ ہے جو انتخابی مہم کے دوران کیے گئے وعدوں کے مطابق سڑکیں بنانے اور دیگر کام کرنے میں ناکامی پر پیش آیا۔

یہ بھی پڑھیں:میکسیکو میں تیز دھار آلے کے وار سے صحافی قتل

حکام نے میئر پر حملے کے بعد ریاست میں سیکیورٹی کے لیے اضافی نفری تعینات کردی ہے۔

خیال رہے کہ میکسیکو میں منشیات فروش میئرز اور مقامی سیاست دانوں کو ان کے مطالبات پورے نہ کرنے پر اکثر نشانہ بناتے ہیں، جبکہ شہریوں کی جانب سے اس طرح کے واقعات عام نہیں۔

میئر جارج لوئس کا کہنا تھا کہ وہ اغوا اور قتل کی کوشش پر مقدمہ دائر کروائیں گے۔

رپورٹ کے مطابق واقعے کی ایک ویڈیو بھی سامنے آئی ہے جس میں لوگوں کو دیکھا جاسکتا ہے جو میئر کو گھسیٹ کر عمارت سے باہر نکال رہے ہیں اور گاڑی کے پیچھے لگنے پر مجبور کیا جارہا ہے اور رسی سے گاڑی میں باندھ کر گھمایا جارہا ہے۔

مزید پڑھیں:میکسیکو کے بار میں حملہ، ہلاکتیں 26 ہوگئیں

پولیس نے مداخلت کر کے میئر کو شہریوں سے چھڑایا اور انہیں لوگوں سے بچایا، تاہم اس دوران تصادم سے کئی افراد زخمی ہوئے۔

یاد رہے کہ 4 ماہ قبل بھی ناخوشگوار واقعہ پیش آیا تھا جب لوگوں کا گروہ میئر کو دفتر میں تلاش کے باوجود نہ ملنے وہاں کچرا پھینک گیا تھا۔

رپورٹ میں کہا گیا کہ میئر جارج لوئس کو انتخاب کے دوران حریف امیدوار کے حامیوں سے تصادم پر گرفتار کرگیا تھا لیکن ان کے خلاف ناکافی ثبوت کے باعث انہیں رہا کردیا گیا تھا۔