کورونا وائرس کس طرح انسانی پھیپھڑوں میں تباہی مچاتا ہے؟

08 جون 2021
— شٹر اسٹاک فوٹو
— شٹر اسٹاک فوٹو

طبی ماہرین نے پہلی بار ایسا تفصیلی ماڈل تیار کیا ہے جس سے معلوم ہوتا ہے کہ کورونا وائرس کس طرح انسانوں کے پھیپھڑوں میں تباہی مچاتا ہے۔

امریکا کے محکمہ توانائی کی بروک ہیون نیشنل لیبارٹری کے ماہرین کی تحقیق طبی جریدے جرنل نیچر کمیونیکشن میں شائع ہوئی۔

نتائج سے وضاحت ہوتی ہے کہ کس طرح یہ وائرس پھیپھڑوں کو بہت زیادہ نقصان پہنچاتا ہے اور کیسے وہ وہاں سے دیگر اعضا تک پھیل جاتا ہے۔

محققین نے بتایا کہ گہرائی میں جاکر تفصیلات سے وضاحت ہوتی ہے کہ اس وائرس سے جسم کو اتنا نققصان کیوں پہنچتا ہے اور اس کی بنیاد پر روک تھام کے ذرائع کی تلاش آسان ہوسکتی ہے۔

اس مقصد کے لیے ماہرین نے ایک مالیکیولر ماڈل تیار کیا تھا جس کے لیے جدید ترین ٹیکنالوجی کا استعمال کیا گیا۔

انہوں نے بتایا کہ اس ٹیکنالوجی وائرل پروٹینز کی تحقیق کے لیے بہت زیادہ کارآمد ہے جو دیگر تیکنیکس سے بہت مشکشل ہوتی ہے۔

تحقیق میں بتایا گیا کہ کورونا وائرس میں ایسا پروٹین ہوتا ہے جو وائرس کی باہری جھلی میں اسپائیک پروٹین کے ساتھ پایا جاتا ہے۔

یہ پروٹین ای اس وائرس کو خلیاتا کے اندر نقول بنانے میں مدد فراہم کرتا ہے جبکہ انسانی پروٹینز کو ہائی جیک کرکے وائرس کے اخراج اور منتقلی میں بھی اہم کردار ادا کرتا ہے۔

محققین کے مطابق یہ عمل وائرس کے لیے بہترین ہوتا ہے مگر انسانوں کے لیے بدترین، بالخصوص کووڈ 19 کے معمر اور پہلے سے مختلف امراض کے شکار افراد کے لیے۔

تحقیق میں دریافت کیا گیا کہ جب پھیپھڑوں کے خلیات میں خلل پیدا ہوتا ہے تو مدافعتی خلیاات آکر نقصان کی تلافی کی کوشش کرتے ہیں، جس کے نتیجے میں چھوٹے پروٹینز سائٹوکائینز کا اخراج ہوتا ہے، یہ مدافعتی ردعمل ورم کو متحرک کرکے زیادہ بدتر کرتا ہے، جس کو سائٹوکائین اسٹروم بھی کہا جاتا ہے۔

اس صورتحال میں وائرسز کے لیے پھیپھڑوں سے نکل کر دوران خون کے ذریعے دیگر اعضا بشمول جگر، گردوں اور شریانوں کو متاثر کرنا آسان ہوجااتا ہے۔

محققین کے مطابق اس منظرنامے میں مریضوں کو دیگر وائرسز سے بھی زیادہ نقصان پہنچتا ہے جبکہ زیادہ ای پروٹینز بننے لگتے ہیں، جس کے نتیجے میں یہ ایک بار بار ہونے والا سائیکل بن جاتا ہے، یعنی مزید وائرسز ای پروٹٰنز بناتے ہیں اور خلیات کے پروٹینز کو ہائی جیک کرکے زیادہ نقصان پہنچاتے ہیں، زیادہ پھیلتے ہیں اور ایسا بار بار ہوتا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ اسی وجہ سے ہم اس تعلقق پر تحقیق کرنا چاہتے تھے۔

انہوں نے ای پروٹین اور پھیپھڑوں کے پروٹین پی اے ایل ایس 1 کے درمیان تعلق کا گہرائی میں جاکر جائزہ لیا اور اس کی تصاویر بنائیں اور ان کو علم ہوا کس طرح یہ وائرس پھیپھڑوں میں تباہی مچاتا ہے، جس کی وضاحت اوپر کی جاچکی ہے۔

محققین نے بتایا کہ اس تعل کو سمجھنے سے ماہرین کو یہ جاننے میں بھی مدد ملے گی کہ نئے کورونا وائرس جیسے وائرسز کا ارتقا کیسے ہوتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ جتنا زیادہ وقت تک وائرس گردش کرتا رہے گا، اتنا زیادہ امکان ہے کہ اسے ابھرنے کے نئے ارتقائی سبقت حاصل ہوسکے گی۔

ان کا کہنا تھا کہ اس وجہ کے باعث ہمارے لیے ضروری ہے کہ اس وائرس کے خلاف مؤثر علاج کی شناخت کریں۔

تبصرے (0) بند ہیں