• KHI: Maghrib 7:22pm Isha 8:51pm
  • LHR: Maghrib 7:08pm Isha 8:47pm
  • ISB: Maghrib 7:19pm Isha 9:03pm
  • KHI: Maghrib 7:22pm Isha 8:51pm
  • LHR: Maghrib 7:08pm Isha 8:47pm
  • ISB: Maghrib 7:19pm Isha 9:03pm

خواتین بہت مختصر لباس پہنیں گی تو اس کا مردوں پر اثر ہوگا، وزیر اعظم

شائع June 21, 2021
وزیر اعظم نے مذکورہ انٹرویو میں کئی اہم سیاسی معاملات پر بھی بات کی—اسکرین شاٹ
وزیر اعظم نے مذکورہ انٹرویو میں کئی اہم سیاسی معاملات پر بھی بات کی—اسکرین شاٹ

وزیر اعظم عمران خان کو حال ہی میں اسٹریمنگ ویب سائٹ ’ایچ بی او میکس‘ کو دیے گئے انٹرویو میں خواتین سے متعلق بات کرنے پر تنقید کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔

وزیر اعظم عمران خان نے امریکی اسٹریمنگ ویب سائٹ کو دیے گئے انٹرویو میں پاکستان اور امریکا کے تعلقات سمیت افغانستان میں پاکستان کے کردار اور چین میں اویغور مسلمانوں کے ساتھ انصافی کے علاوہ مسئلہ کشمیر پر بھی کھل کر بات کی تھی۔

اسی پروگرام میں جب انٹرویو کرنے والے صحافی نے وزیراعظم سے ان کے ماضی میں ریپ کو فحاشی کے ساتھ منسلک کرنے کے بیان سے متعلق سوال کیا تو اس پر انہوں نے کہا کہ 'یہ سراسر بکواس ہے میں نے ایسا نہیں کہا کہ میں نے پردے کے تصور پر بات کی تھی پردے کا تصور یہ ہے کہ معاشرے میں فتنے سے گریز کیا جائے۔

وزیر اعظم نے کہا کہ پاکستان ایک مکمل مختلف معاشرہ ہے'اگر آپ معاشرے میں فتنے کو پروان چڑھائیں گے اور ان نوجوانوں کے پاس کہیں اور جانے کا راستہ نہیں ہوگا تو اس کے اثرات مرتب ہوں گے'۔

یہ بھی پڑھیں: پاکستان، امریکا کو اپنے اڈے استعمال کرنے کی ہرگز اجازت نہیں دے گا، وزیر اعظم

سوال پوچھا گیا کہ 'کیا آپ سمجھتے ہیں کہ خواتین جو پہنیں اس کا کوئی اثر ہوتا ہے کیا یہ فتنے کا حصہ ہے؟

جس پر وزیراعظم نے کہا کہ 'اگر خواتین بہت مختصر لباس پہنیں گی تو اس کا مردوں پر اثر ہوگا تا وقت یہ کہ وہ روبوٹ ہوں، میرا مطلب عمومی سمجھ کی بات ہے کہ اگر آپ کا معاشرہ ایسا ہو کہ جہاں لوگوں نے ایسی چیزیں نہ دیکھی ہوں تو اس کا ان پر اثر ہوگا۔

جب صحافی نے بحیثیت بین الاقوامی کرکٹ اسٹار کے ان کا ماضی یاد دلایا تو وزیراعظم نے کہا کہ 'یہ میرے بارے میں نہیں میرے معاشرے کے بارے میں ہے، میری ترجیح یہ ہے کہ میرے معاشرے کا رویہ کیا ہے اس لیے جب ہم دیکھیں گے کہ جنسی جرائم بہت زیادہ بڑھ گئے ہیں تو ہم بیٹھیں گے اور اسے روکنے کے بارے میں بات چیت کریں گے، اس کا میرے معاشرے پر اثر پڑ رہاہے۔

وزیر اعظم عمران خان کے مذکورہ جواب پر انہیں سوشل میڈیا پر تنقید کا نشانہ بنایا جا رہا ہے اور معروف صحافیوں سمیت سیاستدان اور سماجی رہنما بھی ان پر تنقید کرتے دکھائی دیے۔

وزیر اعظم کے مذکورہ انٹرویو کے بعد ٹوئٹر ’ایکسیوز آن ایچ بی او‘ کا ٹرینڈ بھی ٹاپ پر آگیا۔

وزیر اعظم کے بیان پر سینیئر صحافی مشرف زیدی نے ان کا نام لیے بغیر ٹوئٹ کی کہ یہ ایک عام مسئلہ ہے، جسے سمجھنے کے لیے فیمنسٹ ہونے یا صنفی تعلیمات میں پی ایچ ڈی کرنے کی ضرورت نہیں ہوتی۔

انہوں نے لکھا کہ یہ کیسی عقلی دلیل ہے کہ ریپ ملزمان کو مذکورہ عمل کرنے کے لیے ماحول فراہم کیا جاتا ہے؟

انہوں نے لکھا کہ ایسا کہنا ریپ ملزمان کو ان کے عمل سے بری کرنے کے ارادوں کو ظاہر کرتا ہے۔

مزید پڑھیں: مسئلہ کشمیر حل ہوجائے تو جوہری ہتھیاروں کی ضرورت نہیں رہے گی، وزیراعظم

ٹی وی میزبان غریدہ فاروقی نے بھی وزیر اعظم کے بیان کی مذمت کرتے ہوئے انہیں مخاطب ہوتے ہوئے کہا کہ خواتین کا لباس ’ریپ، تشدد، استحصال اور ایسے کسی دوسرے جرائم کا سبب نہیں ہے‘۔

انہوں نے لکھا کہ یہ بیان مرد حضرات اور ریپ ملزمان کو عصمت دری کرنے کا جواز پیش کرتا ہے اور ساتھ ہی یہ متاثرین پر الزام کو ظاہر کرتا ہے۔

صحافی ریما عمر نے بھی وزیر اعظم کے بیان کی مذمت کی اور اسے افسوس ناک بھی قرار دیا۔

انہوں لکھا کہ وزیر اعظم کی جانب سے جنسی تشدد کرنے والے افراد کے بجائے متاثرین پر الزام لگانے کا بیان سن کر افسوس ہوا۔

ساتھ ہی انہوں نے وزیر اعظم کے بیان کو بھی کوڈ کیا۔

واضح رہے کہ وزیر اعظم عمران خان نے اس سے قبل بھی ریپ واقعات سے متعلق متنازع گفتگو کی تھی جس پر انہیں شدید تنقید کا سامنا کرنا پڑگا تھا۔

انہوں نے رواں سال 4 اپریل کو ٹیلی فون پر براہ راست عوام کے سوالات کے جواب دیتے ہوئے ملک میں بڑھتے ریپ واقعات سے متعلق ایک سوال کے جواب میں عریانیت یا خواتین کے بولڈ لباس کو ’ریپ‘ واقعات سے جوڑا تھا۔

عمران خان نے واضح طور پر یہ نہیں کہا تھا کہ خواتین کا بولڈ لباس ہی ریپ کا سبب بنتا ہے تاہم انہوں نے بے پردگی اور فحاشی کو ایسے واقعات سے منسلک کیا تھا۔

تبصرے (3) بند ہیں

Nadia Jun 22, 2021 12:39pm
He didn’t absolve anyone from blame. But he spoke an ugly truth. Yes we wish people were not evil. But they are and somethings may provoke them to be more evil. So though you cannot protect yourself fully you can try by being modest in your appearance in a dangerous society …
Khalid H. Khan Jun 22, 2021 12:45pm
بلکل ٹھیک
AZAM AKBAR Jun 22, 2021 01:13pm
خواتین اور مردوں کے لیے دین اسلام جو کچھ واضح کیا ہے اس پر عمل کرنا چاہیے.-

کارٹون

کارٹون : 13 جون 2024
کارٹون : 12 جون 2024