پاکستان آئی ٹی کا ابھرتا مرکز، سالانہ 25 ہزار آئی ٹی گریجویٹس نکلنے لگے

اپ ڈیٹ 24 نومبر 2021
پاکستان میں تین لاکھ آئی ٹی ماہرین موجود ہیں، رپورٹ—فائل فوٹو: اے ایف پی
پاکستان میں تین لاکھ آئی ٹی ماہرین موجود ہیں، رپورٹ—فائل فوٹو: اے ایف پی

انٹرنیٹ ٹیکنالوجی کمپنی گوگل کے مطابق ڈیجیٹل ٹرانسفارمیشن سے پاکستان میں 2030 تک اقتصادی ترقی میں تقریبا 10 کھرب روپے کا اضافہ ہو سکتا ہے جو کہ ملک کی حالیہ مجموعی پیداوار کے 19 فیصد حصے کے برابر ہے۔

گوگل (GOOGLE) اور پاکستانی انٹرنیٹ ٹیکنالوجی کے ادارے پاشا ([email protected]) کی جانب سے جاری کردہ مشترکہ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ ٹیکنالوجی کے شعبے میں پاکستان تیزی سے ترقی کر رہا ہے اور اگر یہی رفتار رہی تو ملک میں ٹیکنالوجیکل انقلاب برپا ہوگا۔

رپورٹ کے مطابق پاکستان میں تین لاکھ سے زائد انفارمیشن ٹیکنالوجی (آئی ٹی) پروفیشنلز کا مرکز ہے اور یہاں اس وقت سالانہ 25 ہزار سے زائد آئی ٹی گریجویٹس پیدا ہو رہے ہے۔

رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ گزشتہ ایک دہائی کے دوران یعنی 2010 سے لے کر اب تک ملک بھر میں 700 سے زائد ٹیکنالوجی اسٹارٹ اپس کی تربیت مکمل ہو چکی ہے جب کہ گزشتہ برس کورونا کی وبا کے باوجود ٹیکنالوجی کی برآمدات میں 15 فیصد اضافہ ہوا اور اسی شرح اس میں سالانہ اضافہ نوٹ کیا جا رہا ہے۔

رپورٹ سے معلوم ہوتا ہے کہ 2022 میں6 کھرب 10 ارب روپے سے زائد تک پہنچ جائیں گی جب کہ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ پاکستان کی آن لائن آبادی میں بھی تیزی سے اضافہ نوٹ کیا جا رہا ہے اور رواں سال ہی انٹرنیٹ کے استعمال کی شرح میں 54 فیصد اضافہ ہوا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: آئی ٹی سیکٹر میں پاکستان کی برآمدات تاریخ کی بلند ترین سطح تک پہنچ گئیں

مذکورہ رپورٹ گوگل کی سرپرست کمپنی الفا بیٹا (AlphaBeta) کے اکنامسٹس نے تیار کی ہے جس میں تین اقدامات تجویز کیے گئے ہیں جنہیں پاکستان کو ترقی کے لیے استعمال کرنے کا بھی کہا گیا ہے۔

رپورٹ میں حکومت پاکستان کو تجاویز دی گئی ہیں کہ مقامی ٹیک ایکو سسٹم کی مدد کے لیے انفرا اسٹرکچر کو ترقی دیی جائے، آئی ٹی سیکٹر کی بر آمدات کے لیے سازگار ماحول بنایا جائے اور ملک میں جدت اور ڈیجیٹل اسکلز کو فروغ دینے کے منصوبے شروع کیے جائیں۔

مذکورہ رپورٹ کو اسلام آباد میں ہونے والی ایک تقریب میں سامنے لایا گیا، جس میں صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے بھی خطاب کیا اور انہوں نے رپورٹ پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ملک میں آئی ٹی کی ترقی خوش آئندہ بات ہے۔

ڈاکٹر عارف علوی نے مزید کہا کہ رپورٹ کے اہداف کو حاصل کرنے اور ڈیجیٹل پاکستان کا ویژن پورا کرنے کے لیے کل قومیتی طرز فکر کی ضرورت ہوگی جس میں سرکاری و نجی شعبے شریک ہیں۔

تبصرے (0) بند ہیں