• KHI: Maghrib 7:22pm Isha 8:51pm
  • LHR: Maghrib 7:08pm Isha 8:47pm
  • ISB: Maghrib 7:19pm Isha 9:02pm
  • KHI: Maghrib 7:22pm Isha 8:51pm
  • LHR: Maghrib 7:08pm Isha 8:47pm
  • ISB: Maghrib 7:19pm Isha 9:02pm

صوبوں کے اتفاق رائے کے ساتھ نیشنل رجسٹریشن پالیسی بنانے کا فیصلہ

شائع May 23, 2024
—فوٹو:ڈان نیوز
—فوٹو:ڈان نیوز

وفاقی حکومت نے تمام صوبوں کے اتفاق رائے کے ساتھ نیشنل رجسٹریشن پالیسی بنانے کا فیصلہ کرلیا۔

وفاقی وزیر داخلہ محسن نقوی کی زیر صدارت نادرا کے حوالے سے جائزہ اجلاس ہوا جس میں نیشنل رجسٹریشن پالیسی بنانے کا فیصلہ کیا گیا۔

وزیر داخلہ محسن نقوی کا کہنا تھا کہ شناختی کارڈ اور شہریت کا مستند ہونا انتہائی اہمیت کا حامل ہے، اس پالیسی پر تمام صوبوں کا اتفاق رائے بھی حاصل کرنا ہو گا، یونین کونسل کو اس ضمن میں بنیاد کا درجہ حاصل ہے، نادرا کی یونین کونسلز تک رسائی اس سلسلے میں انتہائی ضروری ہے، پالیسی سے شہریت کے انداراج کو شفاف اور فول پروف بنایا جائے گا۔

وزیر داخلہ نے کہا کہ نئی پالیسی سے شہریت کے غیر قانونی اندراج کو بھی روکا جا سکے گا، جس کی وجہ سے غیر ملکیوں کو شناختی کارڈ اور پاسپورٹ جاری ہونے کا معاملہ سامنے آیا۔

اجلاس میں 6 بڑے شہروں میں نادرا سینٹرز میں اضافے کے پلان کا جائزہ لیا گیا،کراچی، لاہور، پشاور، کوئٹہ، اسلام آباد اور راولپنڈی کے علاوہ ملتان کو بھی اس پلان میں شامل کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

وزیر داخلہ نے کہا کہ اس پلان کو حتمی شکل دے کر اگلے چند روز میں اس پر عملدرآمد کا آغاز کیا جائے تاکہ عوام کو غیر ضروری رش اور زحمت سے بچایا جاسکے، عوام کی سہولت کے لیے خدمت مراکز میں بھی نادرا کاؤنٹرز کا آغاز کیا جائے۔

اجلاس میں بتایا گیا کہ وزیر داخلہ کے دوروں اور ان کے بعد کئے گئے اقدامات سے انتظار کا وقت 120 منٹ سے کم ہو کر 75 منٹ رہ گیا ہے، وزیر داخلہ نے وقت کو مزید کم کرنے کی ہدایت دی۔

بریفنگ میں بتایا گیا کہ اس وقت نادرا کی رجسٹریشن کل آبادی کا 85 فیصد ہے، اجلاس میں سیکریٹری داخلہ خرم علی آغا، چیئرمین نادرا لیفٹیننٹ جنرل محمد منیر افسر اور سینئر افسران نے شرکت کی۔

کارٹون

کارٹون : 12 جون 2024
کارٹون : 11 جون 2024