کورونا وائرس: ملکی معیشت پر منفی اثرات کے تدارک کیلئے اہم فیصلے

اپ ڈیٹ 17 مارچ 2020
وزیراعظم عمران خان نے ملک میں وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے مؤثر اقدامات کرنے کی ہدایت کی —فوٹو: وزیراعظم ہاؤس
وزیراعظم عمران خان نے ملک میں وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے مؤثر اقدامات کرنے کی ہدایت کی —فوٹو: وزیراعظم ہاؤس

وزیر اعظم عمران خان نے اپنی کابینہ کے اراکین اور اعلی سرکاری عہدیداروں سے کورونا وائرس سے نمٹنے کے لیے حکومت کی حکمت عملی اور اس کے ملکی معیشت پر منفی اثرات کے بارے میں وسیع مشاورت کی۔

علاوہ ازیں ایک علیحدہ اجلاس بھی ہوا جس میں ویڈیو لنک کے ذریعے چاروں وزرائے اعلی نے بھی شرکت کی اور بعض اہم فیصلے کیے گئے۔

مزیدپڑھیں: نئے کورونا وائرس کی عام علامات سے واقف ہیں؟

ڈان اخبار کی رپورٹ کے مطابق وزیر اعظم عمران خان نے ملک میں وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے مؤثر اقدامات کرنے کی ہدایات جاری کردیں۔

اپنی معاشی ٹیم کے ساتھ اجلاس میں وزیراعظم عمران خان نے ہدایت کی کہ اگر وہ ملک کی معیشت پر کورونا وائرس کے منفی اثرات کو کم کرنے کی ضرورت محسوس کریں تو عالمی مالیاتی بینک اور دیگر بین الاقوامی ایجنسیوں کے ساتھ قریبی رابطہ قائم کریں تاکہ مالی مدد حاصل کی جاسکے۔

اجلاس میں وزیر برائے امور حماد اظہر، وزیر برائے قومی خوراک تحفظ مخدوم خسرو بختیار، وزیر اعظم کے مشیر برائے خزانہ ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ، تجارتی مشیر عبدالرزاق داؤد، وزیر اطلاعات کے معاون خصوصی ڈاکٹر فردوس عاشق سمیت دیگر سرکاری افسران نے شرکت کی۔

وزیر اعظم خان نے حماد اظہر کو ورلڈ بینک اور دیگر بین الاقوامی اداروں سے رابطہ کرنے کی ہدایت کی تاکہ کسی بھی مشکل مالی صورتحال سے نمٹا جا سکے۔

یہ بھی پڑھیں: کورونا وائرس کی علامات ظاہر ہونے میں کتنے دن لگتے ہیں؟

انہوں نے کہا کہ بلا تعطل اقتصادی سرگرمیوں اور ملازمتوں کے تحفظ کو یقینی بنانا حکومت کی اولین ترجیحات ہیں۔

وزیراعظم نے کہا کہ حکومت معیشت کو کورونا وائرس کے منفی اثرات سے بچانے کے لیے تمام اقدامات کررہی ہے۔

عمران خان کو عالمی معیشت اور پاکستان کی معیشت پر کورونا وائرس کے منفی اثرات کے بارے میں بریفنگ دی گئی۔

اس ضمن میں ایک بین الوزارتی کمیٹی قائم کرنے کا فیصلہ کیا گیا جس کی سربراہی مشیر خزانہ کریں گے اور وہ روزانہ کی بنیاد پر ملکی معیشت کا جائزہ لے کر پیشگی اقدامات تجویز کریں گے۔

انہوں نے معاشی ٹیم کو ہدایت کی کہ وہ کسی بھی مشکل صورتحال کے پیش نظر عوام کو ریلیف کی فراہمی کے لیے ایک جامع پالیسی تیار کریں۔

مزیدپڑھیں: کورونا وائرس سے بچاؤ کے لیے یہ احتیاطی تدابیر اپنائیں

وزیراعظم عمران خان نے زور دیا کہ وہ وافر مقدار میں ضروری اشیا کی دستیابی کو یقینی بنائے۔

وزیر اعظم خان نے زور دے کر کہا کہ ذخیرہ اندوزی اور منافع خوروں کے بارے میں کسی بھی قسم کی شکایت کو برداشت نہیں کیا جائے گا اور ایسی شکایت کی صورت میں ذخیرہ اندوزوں کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔

وزرائے اعلیٰ سے ملاقات کے دوران وزیر اعظم خان نے ملک میں کورونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے حفاظتی اقدامات سے متعلق آگاہی مہم چلانے کی ضرورت پر زور دیا۔

اس سلسلے میں وزیر اعظم نے کہا کہ وہ جلد ہی قوم سے خطاب کریں گے۔

انہوں نے کہا کہ ایک قوم ہونے کے ناطے ہمیں کورونا وائرس سے خوفزدہ ہونے کی ضرورت نہیں ہے لیکن ہمیں اس سے لڑنا چاہیے۔

یہ بھی پڑھیں: پاکستان میں کورونا وائرس کے کیسز کی اصل تعداد کیا ہے؟

دریں اثنا پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) نے وزیر اعظم کی خصوصی ہدایت پر کورونا وائرس کے بارے میں ملک گیر مہم چلانے کا فیصلہ کیا۔

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیف آرگنائزر سیف اللہ خان نیازی نے تمام علاقائی صدور کو کورونا وائرس کے بارے میں مؤثر آگاہی مہم شروع کرنے کی ہدایت جاری کردی۔

پی ٹی آئی کے چیف آرگنائزر نے کہا کہ اس مہم کے تحت لوگوں کو کورونا وائرس کے خلاف جدید حفاظتی اقدامات سے متعلق تعلیم دی جائے گی۔

انہوں نے کہا کہ لوگوں کو ضروری حفاظتی اقدامات پر عمل کرنا چاہیے۔

انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کے عہدیدار اور کارکن لوگوں کو اس وائرس کے بارے میں آگاہ کریں گے اور انہیں اس خطرے سے نمٹنے کے لیے صفائی اور حفظان صحت کی جدید تکنیک کے بارے میں آگاہ کریں گے۔

ضرور پڑھیں

تبصرے (0) بند ہیں