روس نے یوکرین کے اہم شہر 'خرسون' کا کنٹرول حاصل کرلیا

اپ ڈیٹ 03 مارچ 2022
خرسون شہر  نے گزشتہ سال نیٹو کے تعاون سے جنگی کھیلوں کی میزبانی کی تھی،  شہر پر قبضہ ماسکو کے لیے نمایاں کامیابی ہے— فوٹو: رائٹرز
خرسون شہر نے گزشتہ سال نیٹو کے تعاون سے جنگی کھیلوں کی میزبانی کی تھی، شہر پر قبضہ ماسکو کے لیے نمایاں کامیابی ہے— فوٹو: رائٹرز

روسی فوجیوں نے ایک ہفتے کی تباہ کن جنگ کے بعد بڑے یوکرینی شہر خرسون پر قبضہ کر لیا، ایک ہفتے کی جنگ نے 10 لاکھ لوگوں کو پناہ گزین بنا دیا ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے 'اے ایف پی' کے مطابق 2 لاکھ 90 ہزار افراد پر مشتمل بحیرہ اسود کے اس شہر نے گزشتہ سال نیٹو کے تعاون سے جنگی مشقوں کی میزبانی کی تھی، اس پر قبضہ ماسکو کے لیے ایک نمایاں کامیابی ہے جبکہ اس نے ممکنہ جنگ بندی کے مذاکرات کے لیے تیاری کرلی ہے۔

یوکرین کے علاقائی عہدیدار نے اعتراف کیا کہ روسی قابض خرسون شہر کے تمام حصوں میں موجود تھے۔

خرسون میں تین روز سے جاری محاصرے کے بعد خوراک اور ادویات کی کمی تھی اور لاشوں کو جمع کرنے اور دفن کرنے کے لیے سخت مشکلات کا سامنا تھا، شہر کے میئر نے بتایا تھا کہ وہ مسلح مہمانوں کے ساتھ مذاکرات کر رہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: روسی صدر کو اندازہ نہیں آگے کیا ہونے والا ہے، جو بائیڈن

اپنے ایک فیس بک پیغام میں شہر کے میئر کا کہنا تھا کہ انہوں نے حملہ آور قوتوں سے کوئی وعدہ نہیں کیا لیکن رات کے وقت کرفیو اور گاڑیوں کی آمد و رفت پر پابندیوں سے اتفاق کیا ہے، اب تک سب ٹھیک ہے، ہمارے اوپر جو جھنڈا لہرا رہا ہے وہ یوکرین کا ہے اور اسی طرح رہنے کے لیے ان تقاضوں کو پورا کرنا ضروری ہے۔

دوسرے مقامات پر مزاحمت کا سامنا کرنے والے روس نے جنوبی محاذ پر اہم پیش رفت جاری رکھی ہوئی ہے، فوجوں کے خرسون میں داخل ہونے کے ساتھ مغرب اور شمال کا راستہ کھول رہا ہے اور اسٹریٹیجک اہمیت کے حامل اہم بندرگاہی شہر ماریوپول کا محاصرہ کر رہا ہے۔

— فوٹو: اے ایف پی
— فوٹو: اے ایف پی

دوسری جانب میئر وادیم بویچینکو نے کئی گھنٹوں تک بمباری جاری رہنے کی اطلاع دی، جس نے شہریوں کو بجلی، پانی اور جما دینے والی سردی میں حرارتی نظام کے بغیر رہنے پر مجبور کردیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ آج کا دن اس جنگ کے سات دنوں میں سب سے مشکل اور ظالمانہ تھا، آج وہ صرف ہم سب کو تباہ کرنا چاہتے تھے، خرسون میں ماسکو کی فتح روسی صدر ولادیمیر پیوٹن کی فوج کے شمال مشرق اور جنوب سے یوکرین میں داخل ہونے کے ایک ہفتے بعد ہوئی ہے۔

یہ بھی پڑھیں: امریکا، روس مذاکرات میں یوکرین کے معاملے پر کشیدگی کم کرنے پر اتفاق

جنگ کے دوران روسی افواج نے ملک بھر میں شہری اہداف پر وقفے وقفے سے بمباری کی ہے، بشمول دارالحکومت کیف اور اکثریتی روسی بولنے والے دوسرے شہر خارکیف میں جو اب مزید شدید حملے کی زد میں آرہا ہے۔

یوکرین کے صدر ولادیمیر زیلنسکی نے میزائلوں، گولوں اور راکٹوں کے بہاؤ کو جنگی جرم قرار دیا ہے اور عالمی فوجداری عدالت نے تصدیق کی ہے کہ تحقیقات جاری ہیں۔

اقوام متحدہ کے پناہ گزینوں کی ایجنسی کے تیزی سے بڑھتے ہوئے اعداد و شمار نے پرتشدد یورپ کے خون آلود ماضی کی یادوں کو جلا بخشی ہے، اب تک 10 لاکھ یوکرینی شہری پڑوسی ممالک پولینڈ، سلوواکیہ، ہنگری، رومانیہ اور مالڈووا پہنچ چکے ہیں۔

ایک پناہ گزین یوکرینی شہری کا صورتحال پر ردعمل دیتے ہوئے کہنا تھا کہ جب روسی فوجی آئے تو ہم نے سب کچھ وہیں چھوڑ دیا، انہوں نے ہماری زندگیاں برباد کر دیں۔

مزید پڑھیں: یوکرین تنازع: امریکا اور روس کے جنیوا میں مذاکرات

— فوٹو: اے پی
— فوٹو: اے پی

جنگی مشین

روسی صدر کے طویل حملے کو ناقص لاجسٹکس، حکمت عملی کی غلطیوں اور یوکرین کی کم طاقت اور کم ہتھیاروں سے لیس فوج کی جانب سے شدید مزاحمت اور رضا کار جنگجوؤں کی مسلسل بڑھتی ہوئی تعداد کے باعث نقصان پہنچا ہے۔

جلے ہوئے روسی ٹینک اور ان کے ڈرائیوروں کی جلی ہوئی باقیات اور غیر مسلح یوکرینی باشندوں کی قابض افواج کا مقابلہ کرنے کی متعدد تصاویر سامنے آئی ہیں۔

ایک سینئر امریکی دفاعی اہلکار نے کہا کہ کیف کے شمال میں روسی فوجی گاڑیوں کا ایک بڑا قافلہ ایندھن اور خوراک کی کمی کی وجہ سے ایک جگہ جام ہو گیا تھا۔

روسی حکام نے حملے سے متعلق خاموشی اختیار کر رکھی تھی اور کریملن نے مقامی میڈیا کو خوش اسلوبی سے نام نہاد خصوصی فوجی آپریشن پر بلیک آؤٹ کر دیا گیا تھا۔

تاہم وزارت دفاع نے گزشتہ روز پہلی بار تسلیم کیا کہ اس کے 498 فوجی ڈیوٹی کے دوران ہلاک ہوچکے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: روس نے یوکرین پر جارحیت کی تو بھرپور جواب دیں گے، بائیڈن

یوکرینی فورسز نے روسیوں کی تعداد اس تعداد سے 10 گنا بتائی ہے جبکہ اصل اعداد و شمار معلوم نہیں ہوسکے، خطرات اور پابندیوں کے باوجود روسیوں نے روسی صدر کی 20 سالہ حکمرانی کو براہ راست چیلنج کرتے ہوئے ملک بھر میں بڑے پیمانے پر جنگ مخالف مظاہرے کیے ہیں۔

ماسکو اور سینٹ پیٹرزبرگ سمیت ملک بھر سے ہزاروں جنگ مخالف مظاہرین کو حراست میں لے لیا گیا ہے۔

— فوٹو: اے ایف پی
— فوٹو: اے ایف پی

سفارتی مذمت

اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی نے بھاری اکثریت سے روس کے خلاف مذمتی قرارداد منظور کرتے ہوئے ماسکو سے مطالبہ کیا کہ وہ فوری طور پر یوکرین سے نکل جائے۔

واشنگٹن میں اعلیٰ امریکی سفارت کار انٹونی بلنکن نے خبردار کرتے ہوئے روس پر الزام لگایا کہ وہ ایسے مقامات پر حملہ کر رہا ہے جو فوجی اہداف نہیں ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:امریکا نے پابندیاں عائد کیں تو دونوں ملکوں کے تعلقات ختم ہو جائیں گے، پیوٹن

امریکی وزیر خارجہ نے کہا کہ ہزاروں نہیں تو سیکڑوں شہری ہلاک یا زخمی ہو چکے ہیں اور وہ اگلے ہفتے یوکرین کی حمایت اور جنگ بندی کے خاتمے کی کوششوں کے لیے مشرقی یورپ کا سفر کریں گے۔

مغربی ممالک پہلے ہی روس کی معیشت پر بھاری پابندیاں عائد کر چکے ہیں اور فنانس سے لے کر ٹیکنالوجیز، کھیلوں سے لے کر فنون تک ہر شعبے میں روس کے خلاف عالمی پابندیاں عائد کی جاچکی اور اس کا بائیکاٹ کیا جا چکا ہے۔

یورپی یونین اور نیٹو کے ارکان پہلے ہی یوکرین کو اسلحہ اور گولہ بارود بھیج چکے ہیں جبکہ انہوں نے واضح کیا ہے کہ وہ فوج نہیں بھیجیں گے۔

ضرور پڑھیں

وزیراعظم کا انتخاب کس طرح ہوتا ہے؟

وزیراعظم کا انتخاب کس طرح ہوتا ہے؟

وزارت عظمیٰ کے لیے اگر کوئی بھی امیدوار ووٹ کی مطلوبہ تعداد حاصل کرنے میں ناکام رہا تو ایوان زیریں کی تمام کارروائی دوبارہ سے شروع کی جائے گی۔

تبصرے (0) بند ہیں