عام انتخابات 2024 کے نتیجے میں بننے والی سندھ اسمبلی کے نومنتخب ارکان نے بطور قانون ساز حلف اٹھالیا، اسپیکر آغا سراج درانی نے ارکان اسمبلی سے حلف لیا۔

آج صبح 11 بجے طلب کیے گئے اجلاس کی کارروائی کا آغاز 40 منٹ کی تاخیر کے بعد ہوا، ایوان کا باقاعدہ آغاز تلاوت قرآن پاک سے ہوا جس کے بعد نعت رسول مقبول پیش کی گئی۔

سندھ اسمبلی میں حلف لینے والوں میں نامزد وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ، فریال تالپور، شرجیل میمن، ناصر حسین شاہ اور دیگر بھی شامل ہیں۔

اس موقع پر اسمبلی ہال میں جیے بھٹو کے نعرے بھی لگائے گئے، جبکہ دوسری جانب سندھ اسمبلی گیلری میں موجود اپوزیشن رہنماؤں نے نعرے بازی بھی کی۔

سندھ اسمبلی میں نو منتخب ارکان سے پہلے سندھی زبان، پھر اردو اور آخر میں انگریزی زبان میں حلف لیا گیا۔

آغا سراج درانی نے ایک بار پھر سندھ اسمبلی کے اسپیکر کے عہدے کا حلف اٹھا لیا۔ انہوں نے سندھی زبان میں حلف اٹھایا لیکن اس سے قبل نامزد وزیراعلیٰ مراد علی شاہ نے نشاندہی کی تھی کہ پہلے آپ حلف لیں۔

حلف برداری کے دوران نعرے بازی

حلف برداری کے دوران اپوزیشن رہنماؤں نے احتجاج کیا اور شدید نعرے بازی کی۔

اس دوران اسپیکر آغا سراج درانی غصہ ہوگئے ہیں اور احتجاجی رہنماؤں کو خاموش رہنے کی ہدایات کرتے رہے۔

اسپیکر آغا سراج درانی نے ایوان میں شور کرنے پر ارکان کو ڈانٹ پلادی انہوں نے کہا کہ ہمیں قانونی کارروائی کرنے دیں، لوگ خاموش ہوجائیں ورنہ گیلری خالی کرادوں گا۔

حلف برداری کے دوران آغا سراج درانی نے کہا کہ روایت کے مطابق ایوان 5 سال چلے گا، ایجنڈے پر مکمل عمل درآمد کی کوشش کریں گے، ایوان میں بیٹھے اپوزیشن ارکان کا خیرمقدم کرتا ہوں۔

انہوں نے نومنتخب اراکین سے مخاطب ہوتے ہوئے کہا کہ نئے نئے چہرے دیکھ رہا ہوں، ایک دو پرانے نظر آرہے ہیں، ہم مل کر کام کریں گے ، سندھ اور پاکستان کے لیے کام کرنا ہے۔

اجلاس ملتوی، اسپیکر اور ڈپٹی اسپیکر کا انتخاب کل ہوگا

بعدازاں اسپیکر آغا سراج درانی نے سندھ اسمبلی کا اجلاس کل بروز اتوار صبح 11 بجے تک ملتوی کردیا۔

سندھ اسمبلی کے نئے اسپیکر اور ڈپٹی اسپیکر کا انتخاب کل (25 فروری) کیا جائے گا، ایوان میں اکثریت رکھنے والی جماعت پاکستان پیپلزپارٹی کی جانب سے سید اویس شاہ کو اسپیکر سندھ اسمبلی اور نوید انتھونی کو ڈپٹی اسپیکر نامزد کیا گیا ہے۔

وزیراعلیٰ سندھ کا انتخاب اگلہ مرحلہ ہوگا جس کے لیے پیپلزپارٹی کی جانب سے مراد علی شاہ کو وزیراعلیٰ نامزد کیا گیا ہے۔

اسپیکر اور ڈپٹی اسپیکر انتخاب کیلئے شیڈول جاری

سندھ اسمبلی میں اسپیکر اور ڈپٹی اسپیکر کے انتخاب کے لیے اسپیکر آغا سراج درانی نے شیڈول جاری کردیا۔

اسپیکر، ڈپٹی اسپیکر کے انتخاب کے لیے کاغذات نامزدگی شام 5 بجے تک جمع کروائے جاسکتے ہیں۔

آج شام 6 بجے تک اسکروٹنی کا عمل ہوگا اور7 بجے تک فہرست جاری ہوگی۔

کل صبح 11 بجے اسپیکر اور ڈپٹی اسپیکر کا انتخاب ہوگا۔

نمبر گیم

ڈان نیوز کے مطابق سندھ اسمبلی میں کُل 148 اراکین نے حلف اٹھایا، جن میں پیپلزپارٹی کے 111 اور ایم کیو ایم پاکستان کے 36 اراکین حلف اٹھانے والوں میں شامل تھے۔

اس کےعلاوہ جماعت اسلامی اور جی ڈی اے اراکین اور پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ آزاد امیدوار بھی حلف لینے نہیں آئے، اپوزیشن کے 13 ارکان اسمبلی حلف برداری میں شریک نہیں ہوئے۔

علاوہ ازیں پیپلز پارٹی کے نادر مگسی چولستان جیپ ریلی میں مصروف ہیں جس کی وجہ سے وہ اجلاس میں شرکت نہیں کر سکے۔

پاکستان پیپلز پارٹی کو 130 ارکان کے ایوان میں 114 نشستوں کے ساتھ برتری حاصل ہے، اس کے بعد ایم کیو ایم 36 نشستوں کے ساتھ اور گرینڈ ڈیموکریٹک الائنس (جی ڈی اے) تین اور جماعت اسلامی کی دو نمائندوں کے ساتھ ایوان میں موجود ہیں۔

تاہم یہ بات قابل ذکر ہے کہ الیکشن کمیشن آف پاکستان نے خواتین کے لیے دو اور اقلیتوں کے لیے ایک نشست کے لیے مختص کردہ نوٹیفکیشن روک دیا ہے، جس کے نتیجے میں جی ڈی اے اور جماعت اسلامی کے اراکین آج حلف نہیں اٹھاسکے۔

احتجاج کرنے والوں کو شرم آنی چاہیے، آغا سراج درانی

پاکستان پیپلزپارٹی کے رہنما آغا سراج درانی نے سندھ اسمبلی باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ احتجاج کرنے والوں کو شرم آنی چاہیے، اسمبلی کی توہین برادشت نہیں کریں گے، اگر انتخابات میں دھاندلی ہوئی ہے تو عدالت کے دروازے کھلے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ دھاندلی ہوئی ہے تو الیکشن کمیشن کے ٹریبونل چلے جائیں، پورا سندھ ہمارے ساتھ ہے، ہم نے سندھ میں فتح حاصل کی ہے۔

آغا سراج درانی نے مزید کہا کہ ہمیں کسی سے ڈر نہیں لگتا، یہ ابھی سے نہیں بلکہ شہید ذولفقار علی بھٹو کے زمانے سے الیکشن لڑتے آتے ہیں اور ہارتے آئے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ سندھ اسمبلی باہر سیاسی جماعتوں کے احتجاج سے انہیں کوئی فرق نہیں پڑتا، سارے انتظامات مکمل ہیں، اسمبلی کے باہر احتجاج افسوس کی بات ہے۔

ہم حلف اٹھائیں گے لوگ احتجاج کرتے رہیں گے، نامزد وزیراعلیٰ سندھ

پاکستان پیپلزپارٹی کی جانب سے نامزد وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے کہا ہے کہ ہم آج صوبائی اسمبلی کا حلف اٹھائیں گے اور لوگ احتجاج کرتے رہیں گے۔

سندھ اسمبلی آمد پر میڈیا سے بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ میں نے پہلے ہی بتا دیا تھا کتنی سیٹیں ملیں گی، ہم نے سوچ سے بڑھ کر نشستیں حاصل کیں۔

مراد علی شاہ کا کہنا تھا پاکستان میں مسائل بہت ہیں مل کر حل کریں گے، آج ہم حلف اٹھائیں گے لوگ احتجاج کرتے رہیں گے۔

سپیکر کے نامزد امیدوار اویس قادر شاہ نے کہا کہ مل کر کام کر کے ہر مسئلہ حل کیا جا سکتا ہے، ایوان کو احسن طریقے سے چلایا جائے گا۔

تبصرے (0) بند ہیں