کووڈ 19 کے علاج کے لیے پہلی دوا ملنے کی توقعات میں اضافہ

اپ ڈیٹ اپريل 30 2020

ای میل

— اے پی فائل فوٹو
— اے پی فائل فوٹو

نئے نوول کورونا وائرس سے ہونے والی بیماری کووڈ 19 کا فی الحال کوئی علاج دستیاب نہیں اور طبی ماہرین اس کی علامات کے مطابق ادویات تجویز کرتے ہیں۔

مگر ایسا لگتا ہے کہ اب اس بیماری کے لیے پہلی دوا سامنے آنے والی ہے جس کی وجہ امریکی کمپنی گیلاڈ سائنز کی جانب سے کیا جانے والا دعویٰ ہے جس کے مطابق وبائی مرض کے خلاف تیار کردہ دوا ریمیڈیسیور نے ایک اہم ترین ٹرائل میں کامیابی حاصل کی ہے۔

اینٹ وائرل دوا ریمیدیسیور پر دنیا بھر میں کووڈ 19 کے مریضوں پر متعدد ٹرائلز ہورہے ہیں اور کمپنی کے مطابق یو ایس نیشنل ہیلتھ میں ہونے والی ایک تحقیق میں اس دوا کو بیماری کے خلاف کارآمد دریافت کیا گیا۔

تاہم کمپنی نے اس حوالے سے کوئی ڈیٹا فراہم نہیں کیا۔

مگر امریکی ادارے ایف ڈی اے کی جانب سے اس دوا کے ایمرجنسی استعمال کی منظوری دیئے جانے کا اعلان بھی جلد متوقع ہے۔

دوسری جانب امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے ساتھ ان کی ٹاسک فورس کی قیادت کرنے والے سائنسدان ڈاکٹر انتھونی ایس فاؤی نے بھی توقع ظاہر کی ہے کہ اس دوا سے اموات کی شرح میں کمی لانے میں مدد مل سکے گی۔

کمپنی نے اپنے بیان میں کہا 'ہم سمجھتے ہیں کہ اس ٹرائل میں مطلوبہ کامیابی حاصل ہوئی ہے'۔

درحقیقت اس کا مطلب ہے کہ اس دوا کے استعمال سے مریض دیگر ادویات کے مقابلے میں زیادہ جلد صحتیاب ہوسکتے ہیں۔

کمپنی کا کہنا تھا کہ یو ایس نیشنل ہیلتھ انسٹیٹوٹ آف الرجی اینڈ انفیکشز ڈیزیز کی جانب سے ایک بریفنگ میں مزید تفصیلات فراہم کی جائیں گی۔

ریمیڈیسیور کو اس وقت کورونا وائرس کے خلاف آزمائی جانے والی دیگر ادویات کے مقابلے میں زیادہ اہمیت دی جارہی ہے۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ ریمیڈیسیور کے حوالے سے چین میں ہونے والی ایک تحقیق میں اس کے اثرات کو دیگر ادویات کے مقابلے میں زیادہ مفید قرار نہیں دیا گیا تھا۔

چین میں ہونے والی تحقیق کو مریضوں کی کمی کے باعث ابتدائی مرحلے میں روک دیا گیا تھا اور اسی وجہ سے نتائج کو بھی دیگر طبی ماہرین نے نامکمل قرار دیا تھا۔

کووڈ 19 کے خلاف موثر علاج ایک اہم سنگ میل ثابت ہوگا کیونکہ ابھی کووڈ 19 کے مریضوں پر ایسی ادویات کی آزمائش ہورہی ہے جن کی منظوری نہیں دی گئی۔

ریمیڈیسیور کو انجیکشن کے ذریعے دیا جاتا ہے اور اب تک ہسپتال میں زیرعلاج مریضوں پر آزمایا گیا اور اسے حفاظتی طریقہ علاج یا معتدل علامات والے مریضوں کی مدد کے لیے آزمایا نہیں گیا۔

اس سے قبل رواں ماہ کے وسط میں شکاگو کے ایک ہسپتال میں اس دوا کے ٹرائل کے نتائج جاری کیے گئے تھے۔

یونیورسٹی آف شکاگو میڈیسین میں کووڈ 19 کے 125 مریضوں کو دوا ساز کمپنی کی کلینیکل ٹرائلز کے تیسرے مرحلے میں شامل کیا گیا تھا۔

125 میں سے 113 افراد میں بیماری کی شدت زیادہ تھی اور ان سب مریضوں کے علاج کے لیے ریمیڈیسیور سیال کو انجیکشن کے ذریعے روزانہ جسم میں انجیکٹ کیا گیا۔

شکاگو یونیورسٹی کی وبائی امراض کی ماہر اور اس تجرباتی دوا کی تحقیق کی نگرانی کرنے والی ڈاکٹر کیتھلین مولین نے بتایا 'بہترین خبر یہ ہے کہ ہمارے بیشتر مریض اب ڈسچارج ہوچکے ہیں، اب صرف 2 مریض باقی رہ گئے ہیں'۔

نتائج سے معلوم ہوا کہ اس دوا کے استعمال سے مریضوں کے بخار اور نظام تنفس کی علامات بہت جلد ختم ہوگئیں اور ایک ہفتے سے بھی کم وقت میں تمام مریضوں کو صحتیاب قرار دے کر ہسپتال سے ڈسچارج کردیا گیا۔

ڈاکٹر کیتھلین نے کوئی واضح نتیجہ بیان کرنے سے گریز کرتے ہوئے کہا 'یہ بہت مشکل ہے، کیونکہ اس تحقیق میں دیگر ادویات کا استعمال کرنے والے گروپ کا موازنہ نہیں کیا گیا، مگر جب ہم نے دوا کا استعمال شروع کیا، تو ہم نے دیکھا کہ بخار کی شدت میں کمی آنے لگی، ہم نے دیکھا جب مریض شدید بخار کے ساتھ آتے تو اس دوا سے اس میں فوری کمی آتی، ہم نے لوگوں کو علاج کے ایک دن بعد ہی وینٹی لیٹرز سے باہر آتے دیکھا، تو مجموعی طور پر ہمارے مریضوں پر اس دوا نے بہت اچھا کام کیا'۔

ان کا کہنا تھا 'ہمارے بیشتر مریضوں میں بیماری کی شدت بہت زیادہ تھی اور ان میں سے بیشتر 6 دن میں ڈسچارج بھی ہوگئے، تو ہم کہہ سکتے ہیں کہ علاج کا دورانیہ 10 دن نہیں تھا، بہت کم مریض یعنی شاید 3 افراد ایسے تھے جن کو 10 دن میں ڈسچارج کیا گیا'۔

گیلاڈ کی سنگین کیسز پر دنیا بھر میں 152 مختلف کلینکل ٹرائلز میں 24 سو مریضوں کو شامل کیا گیا ہے جبکہ 169 مختلف مراکز میں 16 سو معتدل مریضوں پر الگ ٹرائلز پر کام ہورہا ہے۔

ان ٹرائلز میں دوا سے 5 اور 10 روزہ علاج کے کورسز پر تحقیقات کی جارہی ہے اور بنیادی مقصد یہ دیکھنا ہے کہ مریضوں کے لیے دونوں کورسز میں سے زیادہ موثر کونسا ہے۔

اس سے قبل 10 اپریل کو جریدے نیو انگلینڈ جنرل آف میڈیسن میں شائع تحقیق میں اس دوا کا استعمال مریضوں کے ایک چھوٹے گروپ میں کیا گیا اور ان میں سے ایک اکثریت کی حالت میں نمایاں بہتری دیکھنے میں آئی۔

تحقیق میں 53 مریضوں کو شامل کیا گیا تھا جن کا تعلق امریکا، یورپ اور برطانیہ سے تھا اور حالت خراب ہونے پر ان میں سے 50 فیصد کو وینٹی لیٹر پر رکھا گیا تھا جبکہ 4 کو ہارٹ۔لنک بائی پاس مشین سے منسل کیا گیا تھا۔

ان سب مریضوں کو 10 دن تک اس دوا کا استعمال کرایا گیا اور 18 دن میں 68 فیصد کی حالت میں بہتری آگئی اور جسم میں آکسیجن کی سطح میں اضافہ ہوا۔

30 میں سے 17 افراد جو وینٹی لیٹر پر تھے، وہ لائف سپورٹ مشینوں سے نکلنے کے قابل ہوگئے، جبکہ تحقیق میں شامل 50 فیصد کے قریب افراد صحتیاب ہونے کے بعد ڈسچارج ہوگئے مگر 13 فیصد ہلاک ہوگئے۔

اموات کی شرح ان میں زیادہ تھی جو وینٹی لیٹر پر تھے، جن میں سے 18 فیصد کا انقال ہوا۔

لاس اینجلس کے سیڈا سینائی میڈیکل سینٹر کے ڈائریکٹر اور تحقیقی ٹیم میں شامل جوناتھن ڈی گرائن نے کہا 'ہم اس ڈیٹا سے کوئی حتمی نتیجہ تو نہیں بیان کرسکتے، مگر ہسپتال میں زیرعلاج مریضوں کے مشاہدے سے ہم یہ کہہ سکتے ہیں کہ ریمیڈیسیور کے نتائج حوصلہ افزا ہیں'۔

تحقیق میں اس دوا کو کووڈ 19 کے علاج کے لیے محفوظ اور مؤثر دریافت کیا گیا۔

اس دوا کو وبائی امراض جیسے ایبولا پر قابو پانے کے لیے تیار کیا گیا تھا اور نئے کورونا وائرس پر ابتدائی پر مؤثر ثابت ہونے کی علامات پر چین میں انسانوں پر اس کا ٹرائل فوری طور پر شروع کیا گیا۔

جنوری میں طبی جریدے نیو انگلینڈ جرنل آف میڈیسین میں شائع تحقیق میں بتایا گیا تھا کہ امریکا میں اس وائرس کے پہلے مریض کا نمونیا اسی تجرباتی دوا کے استعمال سے بہتر ہوا۔

اس نئے وائرس کی وبا سے پہلے بھی امریکا میں مختلف یونیورسٹیوں نے لیبارٹریز ٹیسٹوں میں دریافت کیا تھا کہ یہ دوا متعدد اقسام کے کورونا وائرسز کے خلاف موثر انداز سے کام کرتی ہے۔