غزہ: اسرائیلی فورسز کی گولہ باری، 3 فلسطینی جاں بحق

اپ ڈیٹ 18 اگست 2019

ای میل

فلسطین کی وزارت صحت کے مطابق اسرائیلی فورسز نے شہریوں کو غزہ پٹی پر حفاظتی باڑ کے نزدیک نشانہ بنایا — فوٹو: اے ایف پی
فلسطین کی وزارت صحت کے مطابق اسرائیلی فورسز نے شہریوں کو غزہ پٹی پر حفاظتی باڑ کے نزدیک نشانہ بنایا — فوٹو: اے ایف پی

غزہ میں نہتے فلسطینیوں پر اسرائیلی فورسز کی فائرنگ اور گولہ باری کے نتیجے میں 3 افراد جاں بحق جبکہ متعدد زخمی ہوگئے۔

فرانسیسی خبر رساں ادارے اے ایف پی کی رپورٹ کے مطابق فلسطین کی وزارت صحت کا کہنا ہے کہ اسرائیلی فورسز نے شہریوں کو غزہ پٹی پر حفاظتی باڑ کے نزدیک نشانہ بنایا۔

ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ اس حملے میں 3 فلسطینی مارے گئے جبکہ حفاظتی باڑ کے نزدیک موجود متعدد افراد زخمی بھی ہوگئے۔

اسرائیلی فورسز نے الزام عائد کیا ہے کہ حفاظتی باڑ کے نزدیک مسلح افراد کی موجودگی پر انہیں ہیلی کاپٹر اور ٹینک کے ذریعے نشانہ بنایا۔

مزید پڑھیں: اسرائیلی فوج کی فائرنگ سے ایک فلسطینی جاں بحق، 30 سے زائد زخمی

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق اسرائیل میں فلسطینی علاقوں سے ان پر میزائل داغے گئے تاہم اس میں کوئی جانی نقصان نہیں ہوا۔

اسرائیل 2007 کے بعد سے فلسطین میں حکمرانی کرنے والی جماعت حماس کو غزہ سے ہونے والے حملوں کو ذمہ دار ٹھہراتا ہے۔

تاہم حماس کا کہنا ہے کہ یہ حملے 12 سال سے رائج اسرائیل مصری بندش کے نفاذ کے ستائے ہوئے افراد کی جانب سے کیے گئے ہیں۔

خیال رہے کہ فلسطین اور اسرائیل کے درمیان تناؤ میں حالیہ دنوں کے دوران اضافہ ہوا ہے جس کا آغاز اسرائیل کی جانب سے جنوبی یروشلم میں کئی فلسطینیوں کے گھروں کو غیر قانونی کہتے ہوئے مسمار کرنے سے ہوا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: فلسطینی آخر جائیں تو جائیں کہاں؟

صحافیوں کو اس علاقے میں جانے کی اجازت نہیں دی گئی جبکہ رہائشیوں کو ان کے گھروں سے نکال کر باہر کردیا گیا۔

یاد رہے کہ 17 اگست کو فلسطین میں غزہ پٹی پر ہفتہ وار احتجاج کے دوران اسرائیلی فوج سے تصادم کے دوران 30 سے زائد افراد زخمی ہوگئے تھے جبکہ ایک فلسطینی جاں بحق ہوگیا تھا۔

اسی طرح 10 اگست کو ہونے والے احتجاج کے دوران اسرائیلی فورسز کی فائرنگ کے نتیجے میں 4 فلسطینی مارے گئے تھے۔